داستان ظہور

کتاب کی وضاحتیں

شناخت: خدامیان آرانی، مہدی، 1353 -

مصنف کا عنوان اور عنوان: داستان ظہور:ظہور امام زمان علیه السلام کی برکات / مہدی خدامیان آرانی.ترجمہ: مولانا صادق عباس

اشاعت کی تفصیلات: لاہور: موسسۃ آل البیت علیه السلام ، 1397.

ظہور: [136] پی ٹیبل: 14.5 × 21.

فراسٹ: کاموں کا مجموعہ؛ 2.

آئی ایس بی بی: 50000 Rials978-600-8449-21-8:

فہرست کی حیثیت: FAPA (پانچویں ایڈیشن)

نوٹ: پچھلا پرنٹ: وسط، 1392.

نوٹ: پانچویں ایڈیشن.

نوٹ: بائبلگرافی: پی. [135] - 136.

ایک اور عنوان: وقت کے امام کی آمد کی خوبصورتی، عجلالله تعالی فرجه الشریف.

موضوع: محمد بن حسن (اے آر)، بسم اللہ امام، 255 ھ. کہانی

موضوع: محمد بن حسن، امام علیہ السلام - فکشن

موضوع: Muhammad ibn Hasan, Imam XII -- Fiction

موضوع: مہدیزم - پیدائش

کانگریس کی درجہ بندی: BP224 ‫ ‫ /خ34د2 1396

کی درجہ بندی دیویی: 297/462

قومی کتابچہ نمبر: 4746770

ص:1

اشاره

داستان ظہور:(ظہور امام زمان علیه السلام کی برکات)

تالیف: ڈاکٹر مھدی خدامیان آرانی

ترجمہ: مولانا صادق عباس

پیشکش:الفاطمہ ہاؤس واپڈا ٹاؤن

ناشر:موسسۃ آل البیت علیه السلام لاہور

ص:2

بسم اللہ الرحمن الرحیم

جملہ حقوق بحق ناشر محفوظ ہیں

تالیف: ڈاکٹر مھدی خدامیان آرانی

ترجمہ: مولانا صادق عباس

پروف ریڈنگ:مقصودحسین علوی

پیشکش:الفاطمہ ہاؤس واپڈا ٹاؤن

ناشر:مئوسسۃ آل البیت علیه السلام لاہور

تاریخ اشاعت: شعبان المعظم 1439 ہجری 

ص:3

فہرست

سخن مترجم5

سخن مئولف8

مکہ کا چاند کعبہ کی طرف آرہا ہے9

سید محمد شہید ہونا16

آباد گھر کہاں ہے 22

تین سو تیرہ افراد آجاتے ہیں28

پرچم جو کہ بولتا ہے34

تلوار کہ پہاڑ کو ریزہ ریزہ کردے43

کعبہ کے پاس کیا ہورہا ہے50

شیطان کی آواز کاسنائی دینا54

لشکرسفیانی کا زمین میں دھنس جانا57

دس ہزار کے لشکر کا آنا63

ناصرین امام علیه السلام67

نہ جلنے والا لباس اور حیرت انگیز عصا71

ص:4

ہزاروں فرشتوں کا مدد کےلئے آنا78

وہ کہ جو دوبارہ زندہ ہوئے84

لشکرامام زمانہ علیه السلام کا نعرہ ؟88

زخمیوں کی طبی امداد92

اس بڑے پتھر کو لائو95

لشکر امام کا مکہ واپس لوٹنا98

مہتاب کے دشمنوں سے انتقام102

کوفہ کی جانب104

سفیانی کا توبہ کرنا109

ایک سخت جنگ کا سامنا113

فلسطین کی طرف روانگی118

کوفہ کی طرف واپسی127

زمین پر جنت131

آخری بات136

ص:5

سخن مترجم

اقوام عالم ایک منجی عالم بشریت کے انتظار میں ہیں ۔اور ہر کوئی اپنے عقیدے اور فہم وفراست کے مطابق اپنی مشکلات کے حل کے کسی ہستی کے منتظر ہیں کہ جس کے آنے سےزندگی میں بہتری آئے گی ۔

امت مسلمہ میں اس بات پر اتفاق ہے کہ حضرت امام مھدی آخر الزمان میں ظہور کریں گے اور دنیا سے ظلم و ستم کا خاتمہ فرمائیں گے ،ان کے ظہور کے بعد پوری دنیا پر اسلام کی حکومت ہوگی اور دنیا حقیقی امن وسکون کا گہوارہ بن جائے گی۔

اسلامی کتب تاریخ واحادیث میں اس کی طرف واضح اشارہ کیا گیا ہے ۔ لیکن اسلامی متون سے زمانہ ظہور کو اس طرح سے نکالنا کہ پڑھنے والوں کوبوریت بھی محسوس نہ ہو اور زمانہ ظہور کا اشتیاق بھی بڑھے جناب آقائے ڈاکٹر مھدی خدامیان آرانی کا خاصہ ہے کہ وہ اتنی خوبصورت منظر کشی کرتے ہیں، کہ پڑھنے والا تاریخ اور مستقبل میں اپنے آپ کو محسوس کرتا ہے ۔اور حال میں اپنے آپ کو اس کی آمادگی کے لئے تیار کرتاہے۔

ص:6

کتاب حاضر بھی مصنف کی ان تصانیف سے ہے کہ جسے تمام لوگ بالخصوص نوجوان پڑھنا چاہتے ہیں ۔اور امیدوں کے اس مرکز کے زمانہ میں رونما ہونے والے واقعات سے آگاہی حاصل کرنا چاہتے ہیں ۔

چونکہ موضوع اتنا وسیع ہے لہذا ہرواقعہ کو ایک مختصر سی کتاب میں سمویا بھی نہیں جاسکتا ،اور اگر اس کے بارے میں مصنف کی نظر میں تاریخی حوالاجات بھی نہ ہوں تو وہ اس کو ذکر کرنے سے اجتناب کرتے ہیں ۔

ہم یہ کہہ سکتے ہیں کہ داستان ظہور پر یہ ایک نہ تو جامع کتاب ہے اور نہ ایک کتاب ہوسکتی ہے پس اس کو پڑھنے سے انسان یہ دعا کرسکتا ہے کہ اسے بھی زندگی میں یہ ایام دیکھنے کو ملیں جس میں خدا کی سرزمین پر خدا کی حکومت اور خداکے منتخب کردہ شخصیات کی حکومت ہو۔

اس کتاب کی تدوین واشاعت میں الفاطمہ ہاؤس کی تعمیر وترقی ،آبادکاری میں حصہ لینے والے اور نمازی حضرات کی دعا ؤں کا خاص اثر ہے کہ جس کی بدولت بندہ ناچیز کو توفیق نصیب ہوئی ہے کہ یہ کتاب حضرت ولی عصر عجل اللہ تعالی فرجہ الشریف کی ولادت باسعادت کے پر مسرت موقع پر

ص:7

مکمل ہوسکی۔اور جناب ظل جعفر زیدی صاحب کی حوصلہ افزائی سے اس کی اشاعت کے مقدمات فراہم ہوسکے ۔خدا وند منان ان کی توفیقات خیر میں اضافہ فرمائے۔

قارئین سے التماس ہے کہ ایک مرتبہ سورہ فاتحہ اور تین مرتبہ سورہ اخلاص کی تلاوت کا ثواب جملہ مومنین ومومنات بالخصوص بیگم و سید غلام عباس زیدی،بیگم و سید ناظر حسین ،شہید سید فاضل حسین۔شہید سید عادل حسین سید جمیل حسین ولد سید غلام عباس،بیگم و سید ،مختاراحمد زیدی،بیگم و سید انصار احمد زیدی،بیگم و سید غلام اصغر زیدی،ارجمند خاتون بنت محمد احسن،سید رضی الحیدر زیدی ،سید وصی حیدر زیدی،بیگم و سید انصار رضا زیدی،سید محمد رضا زیدی،سید وقار حیدر ولد سید ذوالفقار حیدر،علامہ سید اظہر حسن زیدی کی روح کو ہدیہ فرمادیں ۔ آمین یارب العالمین

صادق عباس

خطیب و امام جمعہ الفاطمہ ہاﺅس

واپڈا ٹاﺅن

ص:8

سخن مئولف

بسم اللہ الرحمن الرحیم

میرا ایک دوست سفر پر گیا تھا، میں اس کامنتظر تھا، آپ اس کے منتظر تھے، وہ بھی منتظر تھا!

سب بہار کی آمد کے منتظر تھے اور اسے دیکھنے کےلئے، لمحات گن رہے تھے۔ میں نے قلم کو ہاتھ میں لیا؛ ایک سال ،سینکڑوں کتابوں میں اپنے گمشدہ کو ڈھونڈتا رہا۔

میں چاہتا ہوں اس کے آنے کی تصویر کشی کروں ؛ وہ تصویر کہ جو معصومین علیہم السلام کی احادیث میں بیان ہوئی ہیں وہ خوبصورت تصویر جو آپ کو اس کے آنے کا دیوانہ کر دے۔

آپ کے لیے اس کتاب کو لکھنے کےلئے سو سے زائد کتب کا مطالعہ کیا اب آپ کی باری ہے کہ اس کتاب کو پڑھیں تاکہ آپ کے دل میں ظہور امام کے شوق میں اضافہ ہو اور یاد رکھیں کہ آپ کا ظہور کتنے ہی دلوں کو اُمیدوار بنا دیتا ہے۔ مھدی خدامیان آرانی، قم المقدس

ص:9

مکہ کا چاند کعبہ میں

اس کتاب کو کیوں ہاتھ میں لیا ہے اور کس انگیزہ سے اس کا مطالعہ کر رہے ہیں؟

کیا جانتے ہیں کہ میں آپ کو ایک دور دراز سفر میں لے کر جا رہا ہوں؟

اے میرے بہترین ہمسفر! آپ سے چاہتا ہوں کہ آپ میرے ساتھ مستقبل میں چلیں! وہ مستقبل کہ جسے سب دیکھنا چاہتے ہیں۔

میں آپ کو اس دور میں لے کر جا رہا ہوں کہ جب امام زمانہ علیه السلام ظہور کریں گے؛ جی ہاں! میری بات زمانہ ظہور سے متعلق ہے۔

میں چاہتا ہوں کہ اس زمانہ کے حالات کو آپ کے لیے بیان کروں، کیا تیار ہیں؟

یقینا کئی بار سنا ہے کہ خدا کا وعدہ بہت نزدیک ہے۔ پس اٹھو اور میرے ساتھ مکہ چلو ۔۔۔

آج 20 ذی الحج ہے۔

ص:10

میں اور آپ شہر مکہ میں کعبہ کے پاس کھڑے ہیں ظہور امام تک چند دن باقی ہیں۔

امام زمانہ دس محرم الحرام کو کعبہ میں ظہور کریں گے۔(1)

دیکھو دیکھو! کعبہ کس قدر خوبصورت جلوہ دکھا رہا ہے!

کیا کعبہ کا طواف کرنا چاہیں گے؟

ارے مسجد الحرام اتنی خالی خالی کیوں ہے؟

سنا ہے کہ خانہ خدا میں بہت جمع غفیر ہوتاہے کبھی بھی خانہ خدا میں خلوت (ہجوم کا نہ ہونا) نہیں ہوتی۔

آج جگہ اتنی خالی خالی کیوں ہے؟

کیا لوگوں کا کعبہ سے عشق و محبت کم ہو گیا ہے۔

مکہ امن کا گھر ہے؛ لیکن آج ”سفیانی“ کے سپاہیوں نے اس شہر کا محاصرہ کیا ہوا ہے اسی وجہ سے شہر میں بہت تھوڑے لوگ ہیں۔(2)

اے میرے ہمسفر! کیا ”سفیانی“ کو جانتے ہیں؟


1- الإمام الباقر(علیه السلام): «یخرج القائم(علیه السلام)... یوم عاشورا ، الیوم الذی قُتل فیه الحسین(علیه السلام)»: تهذیب الأحکام ج 4 ص 332، شرح أُصول الکافی ج 12 ص 301.
2- أمیر المؤمنین(علیه السلام): «... کبسنا أصحاب السفیانی ، فإذا تجلّی لهم الصبح یرونهم طائعین...»: معجم أحادیث الإمام المهدی(علیه السلام) ج 3 ص 94.

ص:11

کیا اس کے بارے میں آپ کو کچھ بتاﺅں؟

”سفیانی“امام زمانہ علیه السلام کے دشمنوں میں سے ایک ہے اور اس کا قیام ظہور امام کی علامات میں سے بیان ہوا ہے۔(1)

تقریباً پانچ ماہ قبل اس نے Syria(شام) میں فوجی انقلاب برپا کیا ہے اور اس ملک کی حکومت پہ قبضہ کیا ہے۔ پھر عراق پہ حملہ کیا اور شہر کوفہ پر قبضہ کرلیا اور اس شہر میں بہت زیادہ خون خرابہ کیا اور بہت سے بے گناہ شیعہ مسلمانوں کا قتل عام کیا۔(2)

سفیانی نے ایک لشکر مدینہ بھیجوایا ہے اور اس شہر پر بھی قبضہ کر لیا ہے۔ اب سفیانی شہر مکہ پر بھی قبضہ کرنا چاہتا ہے؛ کیونکہ وہ جانتا ہے کہ امام زمانہ علیه السلام اسی شہر سے ظہور کریں گے۔

اس نے حکم دیا ہے کہ کچھ سپاہی مکہ جائیں اور اس شہر کا محاصرہ کر لیں۔ اب شہر مکہ سفیانی کے قبضہ میں ہے۔

میرے ذہن میں ایک سوال پیدا ہو رہا ہے کہ امام زمانہ علیه السلام اور ان کے ساتھی کیسے اس شہر کا محاصرہ توڑیں گے؟


1- الإمام الکاظم(علیه السلام): «... إنّ أمر القائم حتم من الله ، وأمر السفیانی حتم من الله ، ولا یکون قائم إلاّ بالسفیانی»: قرب الإسناد ص 374، بحار الأنوار ج 52 ص 182.
2- الإمام الباقر(علیه السلام): «یبعث السفیانی جیشاً إلی الکوفه وعدتهم سبعون ألفا ، فیصیبون من أهل الکوفه قتلاً وصلباً وسبیاً...»: الغیبه للنعمانی ص 289، الاختصاص للمفید ص 256، بحار الأنوار ج 52 ص 238، تفسیر العیّاشی ج 1 ص 245، تفسیر نور الثقلین ج 1 ص 486.

ص:12

سفیانی کی فوج بڑی سختی سے آنے جانے والے راستوں کو کنٹرول کررہی ہے۔ تیار ہو جاﺅ۔

ہمیں بھی شہر سے نکل جانا چاہیے ، اوراس جگہ جانا چاہیے کہ جہاں سے چاند اس شہر میں داخل ہو گا۔ وہاں دیکھو!

کیا اُس تیس سالہ جوان کو دیکھ رہے ہو شکل و صورت سے ایک چرواہا لگتا ہے؟ اس کے ہاتھ میں لکڑی کی چھڑی ہے آہستہ آہستہ سفیانی کی فوج کے درمیان سے گزر رہا ہے، بڑی عجیب بات ہے!

سفیانی کی فوج تو کسی کو شہر میں داخل ہونے کی اجازت نہیں دیتی کیوں اس جوان کو روک نہیں رہے؟

نہیں جانتا اسے پہچانا یا نہیں؟

میری جان اس پہ قربان!

یہ جوان، وہی میرے اور آپ کے مولا ہیں کہ جو حکم خدا سے ایک چرواہے کی شکل میں شہر میں داخل ہو رہے ہیں۔(1)


1- الإمام الصادق(علیه السلام): «یسوق بین یدیه أعنُزاً عِجافا حتّی یصل بها...»: مختصر بصائر الدرجات ص 182، بحار الأنوار ج 53 ص 6.

ص:13

وہ دور سے آ رہے ہیں۔ وہ یمن سے مدینہ گئے حضرت پیغمبر اکرم صلی الله علیه و آله و سلم کے شہر میں قیام کیا اور مدینہ پر سفیانی کے حملہ کی وجہ سے وہاں سےنکلے ہیں اور اب مکہ پہنچے ہیں۔(1)

اُن کی نورانی صورت چودہویں کے چاند کی طرح چمک رہی ہے۔(2)

ان کے دائیں جانب دیکھو ان کی گالوں پر ایک تل ،ستارے کی طرح چمک رہا ہے۔(3)

یہ جوان حضرت پیغمبر اکرم صلی الله علیه و آله و سلم کے فرزند ہیں آئے ہیں تاکہ اپنے نانا کے دین کو زندہ کریں۔(4)

امام زمانہ شہر مکہ میں داخل ہوتے ہیں اور اس شہر کے پہاڑوں میں قیام کرتے ہیں۔

شہر مکہ، خدا اور کعبہ کا شہر، اور خدا پرستی کا محور ہے چونکہ امام کا مقصد کفر کا خاتمہ ہے اسی لیے وہ اپنی تحریک کا آغاز مکہ سے کرتے ہیں۔

ابھی امام زمانہ علیه السلام کے ظہور میں کچھ وقت باقی ہے امام پہلے مکہ اس لیے آئے ہیں تاکہ ابتدائی کاموں کو انجام دے سکیں۔


1- رسول الله(صلی الله علیه وآله وسلم): «... یصبر حتّی یأذن الله له بالخروج، فیخرج من الیمن من قریه یُقال لهاأکرعه...»: کفایه الأثر ص 150، بحار الأنوار ج 36 ص 335، و ج 52 ص 380. رسول الله(صلی الله علیه وآله وسلم): «... فیخرج رجل من أهل المدینه هارباً إلی مکّه ، فیأتیه ناس من أهل مکّه فیخرجونه...»: سنن أبی داوود ج 2 ص 275، کنز العمّال ج 11 ص 135.
2- أمیر المؤمنین(علیه السلام): «... شعره علی منکبیه ونور وجهه یعلو سواد لحیته ورأسه...»: روضه الواعظین ص 226، الإرشاد للمفید ص 382، الغیبه للطوسی ص 470، الخرائج والجرائح ج 2 ص 1152، إعلام الوری ص 294، کشف الغمّه ص 263، بحار الأنوار ج 51 ص 36.
3- رسول الله(صلی الله علیه وآله وسلم): «... علی خدّه الأیمن خال کأنّه کوکب دُرّی»: کشف الغمّه ص 269، العقد النضید ص 29، بحار الأنوار ص 80، غایه المرام ص 114، کشف الخفاء ص 288، مجمع الزوائد ج 7 ص 319، المعجم الکبیر ج 8 ص 102، مسند الشامیین ج 2 ص 410، کنز العمّال ج 14 ص 268، الإصابه ج 6 ص 71، ینابیع المودّه ج 3 ص 200.
4- رسول الله(صلی الله علیه وآله وسلم): «المهدی من عترتی من ولد فاطمه»: سنن أبی داوود ج 2 ص 310، تحفه الأحوذی ج 6 ص 403، عون المعبود ج 11 ص 251، شرح نهج البلاغه لابن أبی الحدید ج 1 ص 281، فیض القدیر ج 6 ص 360.

ص:14

ص:15

ص:16

سید محمد کاشہید ہو نا

آج پچیس ذی الحج ہےامام زمانہ علیه السلام علیه السلامکے ظہور میں پندرہ دن باقی ہیں۔

اے میرے پیارے ہمسفر! کیا آپ اتفاق کرتے ہیں کہ ”کوہ ذی طویٰ“ کے اطراف میں جائیں؟(1)

یقینا دعائے ندبہ میں اس جملہ کو بہت زیادہ پڑھا ہو گا۔

" ابرضوی امام عندھا ام ذی طویٰ"

اب اٹھو کوہ ذی طویٰ چلتے ہیں جب کعبہ سے مدینہ کی طرف پانچ کلو میٹر چلتے ہیں تو اس پہاڑ کے پاس پہنچتے ہیں۔

دیکھو! امام کے دس اصحاب اس پہاڑ پر جمع ہوئے ہیں۔(2)

شاید کہیں امام کے تو تین سو تیرہ اصحاب ہیں پس یہ دس افراد ہی کیوں؟

یہ افراد امام کے خاص افراد ہیں جو پہلے امام کی خدمت میں پہنچے ہیں۔

لیکن وہ تین سو تیرہ افراد چودہ دنوں کے بعد مکہ آئیں گے۔


1- الإمام الباقر(علیه السلام): «یکون لصاحب هذا الأمر غیبه فی بعض هذه الشعاب . ثمّ أومأ بیده إلی ناحیه ذی طوی»: الغیبه للنعمانی ص 187، بحار الأنوار ج 52 ص 341، تفسیر العیّاشی ج 2 ص 56، غایه المرام ج 4 ص 210.
2- الإمام الباقر(علیه السلام): «أشیروا إلی ذوی أسنانکم وأخیارکم عشره... فینطلق بهم حتّی یأتون صاحبهم ویعدهم إلی اللیله التی تلیها»: بحار الأنوار ج 52 ص 340، تفسیر العیّاشی ج 2 ص 56.

ص:17

امام زمانہ کوہ ذی طویٰ پر کھڑے ہیں اور منتظر ہیں کہ خدا کی طرف سے انہیں ظہورکی اجازت ملے۔(1)

کیا جانتے ہیں ،کہ جوعباامام زمانہ علیه السلام علیه السلامکے کندھوں پر ہے ،یہ حضرت پیغمبر اکرم صلی الله علیه و آله و سلم کی عباہی ہے؟

آپ کے سر پر جو عمامہ دیکھ رہے ہیں یہ وہی حضرت پیغمبر اکرم صلی الله علیه و آله و سلم کا عمامہ ہے۔(2)

سنو!

امام زمانہ اپنے اصحاب سے کہتے ہیں: ایک شخص کو مکہ بھیجنا چاہتا ہوں۔(3)

ایک بہت اہم کام ہے۔

کون امام زمانہ علیه السلام کا نمائندہ بن کر مکہ کے لوگوں کی طرف جائے گا؟

اب امام اپنے ایک چچا زادبھائی کا اس اہم کام کے لیے انتخاب کرتے ہیں۔ ان کا نام ”سید محمد“ ہے امام انہیں حکم دیتے ہیں کہ مکہ کے لوگوں کے پاس جاﺅ اور انہیں میرا پیغام پہنچاﺅ۔


1- الإمام الصادق(علیه السلام): «کأنّی بالقائم علی ذی طوی قائماً علی رجلیه حافیاً یرتقب بسنه موسی...»: بحار الأنوار ج 52 ص 375.
2- الإمام الصادق(علیه السلام): «فکأنّی أنظر إلیه وقد دخل مکّه وعلیه بُرده رسول الله وعلی رأسه عمامه صفراء»: مختصر بصائر الدرجات ص 182، بحار الأنوار ج 53 ص 6.
3- الإمام الباقر(علیه السلام): «إنّه یقول القائم لأصحابه: یا قوم ، إنّ أهل مکّه لا یریدونی...»: بحار الأنوار ج 52 ص 307.

ص:18

کیا اس پیغام کو سننا چاہتے ہیں؟

غور سے سنو! امام کا پیغام یہ ہے۔ ” میں مہربان خاندان اور نسل پیغمبر سے ہوں اور آپ کو خدا کے دین کی نصرت کی دعوت دے رہا ہوں اے مکہ کے لوگوں میری مدد کرو“۔(1)

آپ تو جانتے ہیں کہ امام زمانہ علیه السلام کو مکہ کے لوگوں کی مدد کی ضرورت نہیں ہے کیونکہ ظہور کا وقت نزدیک ہے جلد ہی خدا کا وعدہ پورا ہو گا اور لاکھوں فرشتے ان کی مدد کو آ جائیں گے۔

پس امام مکہ کے لوگوں سے کیوں مدد مانگ رہے ہیں؟

امام انہیں دعوت دے رہے ہیں تاکہ راہ راست کی ہدایت پا جائیں تو اس صورت میں اس شہر میں کسی کا خون نہ بہے گا۔

جی ہاں! وہ مہربان امام ہیں اور اسی لیے تمام صداقت سے مکہ کے لوگوں کو نصرت کی دعوت دے رہے ہیں۔

دیکھو! سید محمد جانے کے لیے تیار ہیں وہ خوشی سے پھولے نہیں سما رہے کیونکہ انہیں ایک اہم ذمہ داری دی گئی ہے۔


1- الإمام الباقر(علیه السلام): «... فیدعو رجلاً من أصحابه فیقول له: امضِ إلی أهل مکّه فقل: یا أهل مکّه ، أنا رسول فلان إلیکم ، وهو یقول لکم: إنّا أهل بیت الرحمه ومعدن الرساله والخلافه ، ونحن ذرّیه محمّد وسلاله النبیّین ، وأنّا قد ظُلمنا واضطُهدنا وقُهرنا وابتُزّ منّا حقّنا منذ قُبض نبیّنا إلی یومنا هذا ، فنحن نستنصرکم فانصرونا...»: بحار الأنوار ج 52 ص 307.

ص:19

وہ اپنے امام اور دیگر ساتھیوں سے خدا حافظی کرتے ہیں اور مسجد الحرام کی طرف جاتے ہیں۔

میں تھوڑا سا پریشان ہوں مکہ کے لوگ اس جوان کے ساتھ کیا سلوک کریں گے؟

چند گھنٹوں کے بعد بھی سید محمد کی کوئی خبر نہیں آ رہی میری پریشانی میں اضافہ ہو رہا ہے۔

خدایا سید محمد نے کیوں دیر کر دی ہے؟

کچھ دیر کے بعد ایک شخص نہایت پریشان حالت میں امام کی خدمت میں حاضر ہوتا ہے وہ آ کر بتاتا ہے کہ سید محمد مسجد الحرام میں داخل ہوئے آپ کا پیغام مکہ کے لوگوں کو پہنچایا لیکن مکہ کے لوگوں نے ان پر حملہ کر دیا اور انہیں کعبہ کے پاس شہید کر دیا۔(1)

آخر کس جرم میں قتل کیا؟

کیا یہ شہرامن ،حرم الٰہی نہیں ہے؟ کیا یہاں پر حیوانات تک کو بھی امن حاصل نہیں ہے؟


1- الإمام الباقر(علیه السلام): «فإذا تکلّم هذا الفتی بهذا الکلام أتوا إلیه فذبحوه بین الرکن والمقام»: بحار الأنوار ج 52 ص 307.

ص:20

امام کے نمائندہ نے لوگوں سے کیا کہہ دیا ہے کہ اس کو مظلومانہ انداز میں قتل کر دیا ہے؟

یہ وہی شہید ہیں کہ جنہیں احادیث میں (نفس ذکیہ) کے طور پر یاد کیا جاتا ہے۔یقینا اس کا معنی جاننا چاہتے ہیں؟

نفس ذکیہ یعنی بے گناہ اور پاک شخص جو مظلومانہ قتل کیا جائے۔(1)


1- الإمام الصادق(علیه السلام): «قبل قیام القائم خمس علامات محتومات، الیمانی والسفیانی وقتل النفس الزکیه والخسف بالبیداء»: کمال الدین ص 65، بحار الأنوار ج 52 ص 204.

ص:21

ص:22

آباد گھر کہاں ہے؟

یہ مکہ ہے شب نہم محرم،

عالم تشیع حضرت امام حسین علیہ السلام اور ان کے اصحاب بادفاکی شہادت کا غم منا رہا ہے۔ طے پایا ہے کہ خدا کی طرف سے اجازہ ظہور دیا جائے لیکن اس کام کو خاص پراہتمام سے انجام دیا جائے گا۔

ظہور کی اجازت کے بعد سیاہی و تاریکی کی حکومت کا خاتمہ ہو گا اور روشنائی کا سورج طلوع ہو گا۔

آج کی رات انتظار کی گھڑیاں ختم ہوتی ہیں خدا کا حکم صادر ہوتا ہے اگرچہ ہم ابھی تک مکہ میں خانہ خدا کے پاس ہیں لیکن آج رات چوتھے آسمان کی طرف سفر بھی کرنا ہے۔

ارے چوتھے آسمان پر کیا ہو رہا ہے؟ صبر کرو ابھی بتاتا ہوں۔

ہمیں ” بیت المعمور“ کے پاس بھی جانا ہے۔

یقینا کہیں گے کہ بیت المعمور کہاں ہے؟

ص:23

جس طرح ہم کعبہ کو خدا کا گھر سمجھتے ہیں اس کا طواف کرتے ہیں۔ خدا نے اس کعبہ کے اوپر چوتھے آسمان پر بھی ایک گھر بنایا ہے جہاں فرشتے طواف کرتے ہیں۔(1)

” بیت المعمور" یعنی "آباد گھر"امام زمانہ علیه السلام کے ظہور کی اجازت اسی گھر سے صادر ہو گی اور تمام دنیا آباد ہو جائے گی اسی لیے دنیا کی آبادی "آباد گھر " (بیت المعمور) سے شروع ہو گی۔

بس آج کی رات میرے ساتھ چوتھے آسمان پر بھی جانا ہو گا۔

یقینا جانتے ہیں کہ خدا نے قرآن کریم میں سات آسمانوں کا ذکر کیا ہے۔ ہم ابھی چوتھے آسمان پر جانا چاہتے ہیں۔

اچھا دیکھو! کیا دیکھ رہے ہو؟ تمام انبیاءیہاں جمع ہیں یہاں پر آپ حضرت آدم علیہ السلام، حضرت نوح علیہ السلام، حضرت عیسیٰ علیہ السلام، حضرت موسیٰ علیہ السلام اور حضرت ابراہیم علیہ السلام کو دیکھ سکتے ہیں۔

یہاں پر کچھ مومنین بھی ہیں۔

تمام انتظار کر رہے ہیں سب کی نظریں جمی ہوئی ہیں۔


1- الإمام الصادق(علیه السلام): «... لأنّها بحذاء بیت المعمور ، وهو مربّع»: علل الشرائع ج 2 ص 398، کتاب من لا یحضره الفقیه ج 2 ص 191، بحار الأنوار ج 55 ص 5. الإمام السجّاد(علیه السلام): «... وجعل لهم البیت المعمور الذی فی السماء الرابعه»: علل الشرائع ج 2 ص 407.

ص:24

ادھر دیکھو، کیا دیکھتے ہیں۔

فرشتے چند نورانی منبر وں کو ” بیت المعمور“ کی طرف لا رہے ہیں۔(1)

اچھی طرح دیکھو کتنے نورانی منبر ہیں ان منبروں کی تعداد کتنی ہے؟

درست ہے چار نورانی منبر ہیں!

حضرت رسول اکرم صلی الله علیه و آله و سلم، حضرت امام علی علیہ السلام، حضرت امام حسن علیہ السلام، حضرت امام حسین علیہ السلام کو دیکھو کس انداز سے ان منبروں پر بیٹھے ہیں۔

مومنین، فرشتوں اور انبیاءمیں کتنا شوق و اشتیاق ہے۔

اسی دوران آسمان کے تمام دروازے کھل جاتے ہیں۔(2)

حضرت پیغمبر اکرم صلی الله علیه و آله و سلم دعا کرنا چاہتے ہیں اپنے خدا کے ساتھ راز و نیاز کرتے ہیں۔ تمام فرشتے، انبیاءان کے ساتھ ہمنوا ہوجاتے ہیں۔

غور سے سنو آپ بھی حضرت پیغمبر اکرم صلی الله علیه و آله و سلم کی با ت سن سکتے ہیں۔


1- الإمام الصادق(علیه السلام): «... نصب لمحمّد وعلی والحسن والحسین(علیهم السلام) منابر من نور عند البیت المعمور...»: الغیبه للنعمانی ص 284، بحار الأنوار ج 52 ص 297.
2- الإمام الصادق(علیه السلام): «... فیصعدون علیها ویجمع لهم الملائکه والنبیّین والمؤمنین ، ویفتح أبواب السماء...»: بحار الأنوار ج 52 ص 297.

ص:25

حضرت پیغمبر اکرم صلی الله علیه و آله و سلم اس طرح فرماتے ہیں: خدایا تو نے اپنے نیک بندوں کو زمین پر حکومت کا وعدہ کیا ہے اس وعدہ کو پورا کرنے کا وقت آ پہنچا ہے۔(1)

تمام فرشتے، انبیاءبھی اس بات کو زمزمہ کرتے ہیں۔

دیکھو حضرت پیغمبر اکرم، امام علی ، امام حسن و امام حسین علیہم السلام منبروں پر ہی سجدہ میں چلے گئے ہیں۔ وہ سجدہ میں یوں کہتے ہیں: خداوندا! ظالموں پر سختی فرما کیونکہ انہوں نے تیری حدود کو توڑا ہے تیرے دوستوں کو قتل اور اچھے لوگوں کو ذلیل کیا ہے۔(2)

اے میرے پیارے ہمسفر! آپ اچھی طرح جانتے ہیں کہ ان باتوں سے کیا مراد ہے۔ جب خانہ وحی خدا کو آگ لگائی گئی دختر رسول کو شہید کیا گیا اس دن خدا کی حرمت ٹوٹ گئی۔

جس دن امام حسین پیاسے شہید کیے گئے اہل ایمان کی ذلت شروع ہو گئی۔ جی ہاں حضرت پیغمبر اکرم صلی الله علیه و آله و سلماچھی طرح جانتے ہیں کہ کس طرح خدا سے اذن ظہور لینا ہے۔ یہ جان کر آپ کو عجیب لگے گا کہ آنحضرت


1- الإمام الصادق(علیه السلام): «... یا ربّ ، میعادک الذی وعدت فی کتابک...»: الغیبه للنعمانی ص 284.
2- الإمام الصادق(علیه السلام): «... ثمّ یخرّ محمّد وعلیّ والحسن والحسن سجداً ، ثمّ یقولون: یا ربّ اغضب ، فإنّه هتک حریمک...»: بحار الأنوار ج 52 ص 297.

ص:26

کے منبر پر آنے سے قبل خداوند عالم ایک فرشتہ کو آسمان سے دنیا پر بھیجتا ہے۔(1)

میں بہت دیر تک سوچتا رہا کہ اس کام کی علت کو سمجھوں۔

جی ہاں! حضرت پیغمبر اکرم صلی الله علیه و آله و سلم اس وقت تک منبر سے نیچے نہیں آتے جب تک امام زمانہ علیه السلام کو اذن ظہور نہ ملے۔

اور خداوندعالم نے بھی اپنے حبیب کی خوشی کے لیے فرشتہ کو پہلے آسمان دنیا پر بھیجا تاکہ جونہی حضرت پیغمبر اکرم صلی الله علیه و آله و سلم کی دعا تمام ہو یہ فرشتہ جتنی جلدی ممکن ہو سکےامام زمانہ علیه السلام کو حکم ظہور کا حکم نامہ دے سکے۔

حضرت پیغمبر اکرم صلی الله علیه و آله و سلم نے اس سجدہ میں اس طرح خدا سے بات کی اور اپنے دل سےغم کو نکالا کہ جس کے بعد ظہور میں کسی قسم کی تاخیر برداشت نہیں کی جا سکتی۔


1- الإمام الصادق(علیه السلام): «إذا کان لیله الجمعه أهبط الربّ تبارک وتعالی ملکاً إلی السماء الدنیا...»: الغیبه للنعمانی ص 284.

ص:27

ص:28

تین سو تیرہ افراد آ نا

اگر غور کریں تو دیکھیں گے کہ مکہ کے لوگ کسی اہم مسئلہ کے بارے میں آپس میں باتیں کر رہے ہیں۔

کیا آپ بھی چاہتے ہیں ان کی باتوں سے آگاہی حاصل کریں؟

کل رات تین سو تیرہ افراد مکہ میں داخل ہوئے ہیں اور صبح تک مشغول عبادت رہے۔(1)

وہ مسجد الحرام میں جمع ہوئے اور تمام نگاہوں کو اپنی جانب متوجہ کر لیاہے۔(2)

مکہ کے لوگ تعجب کرتے ہیں کہ وہ نہیں جانتے کہ وہ کہاں سے آئے ہیں اور کیسے اپنے آپ کو مکہ پہنچایا ہے کیونکہ شہر مکہ کا سفیانی کی فوج نے محاصرہ کر رکھا ہے۔(3)

عجیب ہے کہ ان تمام جوانوں کا لباس بھی ایک جیسا ہے۔


1- الإمام الباقر(علیه السلام): «بینا شباب الشیعه علی ظهور سطوحهم نیام ، إذا توافوا إلی صباحهم لیلهواحده...»: الغیبه للنعمانی ص 330، بحار الأنوار ج 52 ص 370.
2- الإمام الصادق(علیه السلام): «فهؤلاء ثلاثمئه وثلاثه عشر رجلاً بعدد أهل البدر ، یجمعهم الله بمکّه فی لیله واحده وهی لیله الجمعه...»: الملاحم والفتن ص 379.
3- أمیر المؤمنین(علیه السلام): «إنّ أصحاب القائم شباب لا کهول فیهم ، إلاّ کالکحل فی العین...»: الغیبه للنعمانی ص 330.

ص:29

سب کی قد و قامت بھی ایک جیسی ہے، جیسے کوئی فوجی دستہ ہو ہر لحاظ سے منظم، جو کوئی بھی ان کو دیکھتا ہے مبہوت ہو جاتا ہے۔(1)

ان جوانوں کا مکہ میں آنا ایک راز ہے کہ کوئی نہیں جانتا۔

یہ جوان دنیا کے مختلف حصوں سے ایک لمحہ میں مکہ پہنچ جاتے ہیں۔

وہ، حکم خدا سے ” طی الارض“ کے ذریعہ مکہ آئے ہیں۔

شاید پوچھیں کہ طی الارض کیا ہے؟

اگر ایک لمحہ میں بغیر کوئی وسیلہ نقلیہ استعمال کرتے ہوئے ہزاروں کلو میٹر کا فاصلہ طے کریں تو اس کو طی الارض کہا جاتا ہے۔

جی ہاں! اصحاب امام زمان حیرت انگیز معجزت رونما کرتے ہوئے مکہ آئے ہیں۔

جی ہاں امام زمانہ علیه السلام کا ظہور ان تین سو تیرہ افراد سے وابستہ ہے ، خدا کاارادہ یہ تھا کہ وہ ایک لمحہ میں مکہ میں جمع ہوجائیں۔(2)


1- أمیر المؤمنین(علیه السلام): «کأنّی أنظر إلیهم والزیّ واحد والقدّ واحد والجمال واحد واللباسواحد...»: الملاحم والفتن ص 294.
2- الإمام الصادق(علیه السلام): «أما لو کملت العدّه الموصوفه ثلاثمئه وبضعه عشر ، کان الذی تریدون»: الغیبه للنعمانی ص 211، بحار الأنوار ج 65 ص 165.

ص:30

جو کوئی بھی خدا کے اسم اعظم کو جانتا ہو اس کی دعا قبول ہوتی ہے۔امام زمان خدا کو اس اسم اعظم کی قسم دیتے ہیں ،تین سو تیرہ اصحاب پلک جھپکتے ہی مکہ میں جمع ہوجاتے ہیں۔(1)

اب آپ اس راز سے آگاہ ہو گئے ہیں لیکن مکہ کے لوگوں کا تعجب باقی ہے۔ وہ مسجد الحرام میں جمع ہو کر ان کے بارے میں باتیں کر رہے ہیں: کہ کیسے یہ جوان مکہ میں داخل ہوئے ہیں؟

اس طرف دیکھو! وہ شخص عمائدین مکہ کی طرف جا رہا ہے وہ کون ہے؟ اور کیوں لوگوں کو چیرتا ہوا جا رہا ہے؟

وہ براہِ راست گورنر مکہ کے پاس جاتا ہے سلام کرتا ہے اور کہتا ہے:

کل رات عجیب و غریب خواب دیکھا ہے اس لیے بہت ڈرا ہوا ہے۔ (2)

گورنر مکہ اس کی طرف دیکھتا ہے اور کہتا ہے: ”اپنا خواب مجھے بتاﺅ“۔

وہ شخص اس طرح کہتا ہے: خواب میں دیکھا کہ آسمان پر بادل ظاہر ہوا اور آہستہ آہستہ زمین کی طرف آ رہا ہے یہاں تک کہ کعبہ میں پہنچ جاتا ہے


1- الإمام الصادق(علیه السلام): «إذا أذن دعا الله باسمه العبرانی فاتیحت له صحابته الثلاثمئه والثلاثه عشر...»: الغیبه للنعمانی ص 326، بحار الأنوار ج 52 ص 368.
2- الإمام الصادق(علیه السلام): «... إذ یقبل رجل من بنی مخزوم یتخطّی رقاب الناس حتّی تأتی رئیسهم فیقول: لقد رأیت فی لیلتی هذه رؤیا عجیبه»: الملاحم والفتن ص 379.

ص:31

ان بادلوں میں دیکھا ہے جن کے سبز پر ہیں کافی دیر تک کعبہ کا طواف کرتے ہیں پھر شرق و غرب عالم کو پرواز کر جاتے ہیں۔ (1)

جو کوئی بھی اس بات کو سنتا ہے سوچ میں پڑھ جاتا ہے۔

کیا اس خواب اور ان تین سو تیرہ افراد کے گروہ میں کوئی ربط ہے؟

شہر مکہ میں ایک شخص ہے کہ جو خواب کی تعبیر بتاتا ہے اس سے پوچھتے ہیں کہ اس خواب کی تعبیر بتاﺅ۔

وہ تھوڑی دیر سوچتا ہے پھر کہتا ہے: خدا کے لشکروں میں سے ایک لشکر اس شہر میں داخل ہو گیا ہے اور آپ اس کا مقابلہ نہیں کر سکتے۔(2)

مکہ کےتمام لوگ سوچ میں گم ہو جاتے ہیں جی ہاں، یہ لشکر وہی جوان ہیں کہ جو کل رات مکہ میں داخل ہوا ہے۔

فطری ہے کہ مکہ کے لوگوں کو ان جوانوں پر غصہ آئے؛ کیونکہ یہ چاہتے ہیں کہ اہل بیت علہیم السلام اور ان کے پیروکاروں کو تمام دنیا پر عزت دیں۔ آپ کیا سمجھتے ہیں کہ مکہ کے لوگ پہلا فیصلہ کیا کریں گے؟


1- الإمام الصادق(علیه السلام): «... رأیت کوره نار انقضت من عنان السماء ، فلم تزل تهوی حتّی انحطّت إلی الکعبه ، فدارت فیها فأطافت بالکعبه ما شاء الله ، ثمّ تطایرت شرقاً وغرباً...»: نفس المصدر ص 379.
2- الإمام الصادق(علیه السلام): «... لقد رأیت عجباً وقد طرقکم فی لیلتکم جند من جنود الله لا قوّه لکم بهم»: نفس المصدر ص 379.

ص:32

آپ نے صحیح گمان کیا وہ ان تین سو تیرہ افراد کو گرفتار کریں گے لیکن خدا ان کے دلوں پر خوف مسلط کر دے گا۔

مجھے ان لوگوں کی سادہ لوحی پر ہنسی آتی ہے کہ اب بھی شیعہ دشمنی کی سوچ رکھتے ہیں وہ نہیں جانتے کہ اب شیعہ کی مظلومیت کا دور ختم ہو گیا ہے۔

بزرگان مکہ میں سے ایک شخص ان کے اضطراب کو دیکھتے ہوئے کہتا ہے جن جوانوں کو میں نے دیکھا ہے ان کے چہرے نورانی اور اہل عبادت ہیں انہوں نے ابھی تک کوئی غلط کام ہی نہیں کیا تو کیوں ڈر رہے ہیں؟(1)

مکہ کے لوگ غروب آفتاب تک ان جوانوں کے بارے میں بات کرتے ہیں اور اس قدر ڈرتے ہیں کہ کوئی کچھ نہیں کر سکتا۔ رات ہو جاتی ہے لوگ اپنے گھروں کو لوٹ جاتے ہیں اور سو جاتے ہیں۔(2)


1- الإمام الصادق(علیه السلام): «لا تعجلوا علی القوم إنّهم لم یأتوکم بعد بمنکر ولا ظهروا خلافاً، ولعلّ الرجل منهم یکون فی القبیله من قبائلکم ، فإن بدا لکم منهم شرّ فأنتم وهم، وأمّا القوم...سیماهم حسنه»: نفس المصدر ص 379.
2- الإمام الصادق(علیه السلام): «یضرب الله آذانهم وعیونهم بالنوم ، فلا یجمعوا بعد غداتهم إلی أن یقوم القائم(علیه السلام)»: نفس المصدر ص 379.

ص:33

ص:34

پرچم جو کہ بولتا ہے

شب عاشور ہے اور کل امام زمانہ علیه السلام ظہور کریں گے!

آج کی رات زمانہ غیبت ختم ہو جائے گا شہر مکہ تاریکی میں ڈوبا ہوا ہے لیکن کعبہ کے اطراف نور ہے آج کی رات کوئی بھی مسجد الحرام نہیں آیا۔ (1)

اس جوان کو دیکھ رہے ہیں جو کعبہ کی دیوار کے ساتھ دعا میں مشغول ہے نہیں جانتا وہ خدا سے کیا مانگ رہا ہے۔

کیا چاہتے ہیں کہ اس کے نزدیک ہو کر اسے دیکھیں؟

وہ امام زمانہ علیه السلام ہیں کہ کعبہ کے پاس دعا میں مشغول ہیں اور اپنے خدا کے ساتھ راز و نیاز کر رہے ہیں۔

کیا جانتے ہیں کہ حقیقی مضطر وہ ہے کہ جس کی دعا قبول ہوتی ہے اور اس کے ظاہر کی خدا اصلاح کرتا ہے۔(2)


1- الإمام الباقر(علیه السلام): «یخرج القائم(علیه السلام)... یوم عاشورا الیوم الذی قُتل فیه الحسین(علیه السلام)»: تهذیب الأحکام ج 4 ص 332، شرح أُصول الکافی ج 12 ص 301.
2- الإمام الباقر(علیه السلام): « (أَمَّن یُجِیبُ الْمُضْطَرَّ إِذَا دَعَاهُ وَ یَکْشِفُ السُّوءَ)، نزلت فی القائم»: الغیبه للنعمانی ص 328، بحار الأنوار ج 51 ص 48، تفسیر نور الثقلین ج 4 ص 94. عن الإمام الجواد(علیه السلام): «إنّ الله لیصلح له أمره فی لیله»: کمال الدین ص 337، کفایه الأثر ص 281، إعلام الوری ج 2 ص 242. رسول الله(صلی الله علیه وآله وسلم): «المهدی منّا أهل البیت، یصلحه الله فی لیله»: سنن ابن ماجه ج 2 ص 1367، مسند أبی یعلی ج 1 ص 359.

ص:35

خداوند عالم قرآن مجید میں فرماتا ہے: امن یجیب المضطر اذا دعا ہ و یکشف السوء

کون مضطر کی دعا قبول کرتا ہے اور اس کی سختیوں کو دور کرتا ہے۔(1)

اب آپ سے ایک اہم سوال پوچھتا ہوں: کیا جانتے ہیں کہ امام زمانہ علیه السلام کیسے سمجھتے ہیں ان کی دعا قبول ہوئی ہے؟

وہ کیسے سمجھیں کہ قیام کریں؟

کیا جانتے ہیں کہ غیبت کے اختتام آخری لمحات میں کون سے حوادث رونما ہوں گے؟

اگر غور کریں تو دیکھیں گے کہ امام کے ساتھ ایک پرچم بھی ہے۔(2)

میرے خدایا! وہ پرچم خود بخود کھل رہا ہے۔(3)

اس پرچم پر لکھا ہے ”البعه للّٰہ“ یعنی جو کوئی بھی اس پرچم کی بیعت کرے گا درحقیقت وہ خدابیعت کی کرے گا۔(4)

ایک آواز کانوں میں آ رہی ہے یہ کس کی آواز ہے؟


1- النمل: 62.
2- الإمام الباقر(علیه السلام): «... حتّی یسند ظهره إلی الحجر الأسود ویهزّ الرایه الغالبه»: الغیبه للنعمانی ص 329، بحار الأنوار ج 52 ص 370.
3- رسول الله(صلی الله علیه وآله وسلم): «له عَلَم إذا حان وقت خروجه انتشر ذلک العلم من نفسه...»: عیون أخبار الرضا(علیه السلام) ج 2 ص 65، کمال الدین ص 155، أعیان الشیعه ج 2 ص 60، قصص الأنبیاء للراوندی ص 361.
4- الإمام الصادق(علیه السلام): «فی رایه المهدی مکتوب علیها: البیعه لله»: کمال الدین ص 654، الملاحم والفتن ص 143، ینابیع المودّه ج 3 ص 267.

ص:36

امام دعا میں مصروف ہیں کوئی شخص بھی وہاں پر نہیں ہے پس یہ کون بول رہا ہے؟

اے ولی خدا قیام کریں!

میں اِدھر اُدھر دیکھ رہا ہوں شاید اس بولنے والے کو دیکھ سکوں۔ عجیب! یہ وہی پرچم ہے کہ جو خدا کی قدرت سے بول رہا ہے۔

میرے ہم سفر! تعجب نہ کریں کیاامام زمانہ علیه السلام کا مقام حضرت موسیٰ علیہ السلام سے زیادہ نہیں ہے؟

کیا درخت خدا کے حکم سے نہیں بولتے تھے اور موسیٰ علیہ السلام سے ہم کلام نہ ہوتے تھے؟

یہاں یہ پرچم بھی خدا کے حکم سےامام زمانہ علیه السلام سے بات کرے گا۔

امام کی تلوار کو دیکھو خود بخود غلاف سے باہر آ رہی ہے اور امام کے ساتھ بات کرتی ہے: اے ولی خدا قیام کریں۔(1)

دیکھو مسجد الحرام کس قدر نورانی ہو گئی ہے!


1- الإمام الصادق(علیه السلام): «... له سیف مغمد ، فإذا حان وقت خروجه اقتلع ذلک السیف من غمدهوأنطقه الله عزّ وجلّ ، فناداه السیف: اخرج یا ولیّ الله...»: کمال الدین ص 155، بحار الأنوار ج 52 ص 311.

ص:37

کتنا خوبصورت سماں ہے فرشتے گروہ در گروہ آ رہے ہیں ان کے درمیان وہ فرشتے بھی ہیں جنہوں نے جنگ بدر میں حضرت پیغمبر اکرم صلی الله علیه و آله و سلم کی مدد کی تھی۔(1)

مسجد فرشتوں کی طولانی صفوں سے بھر جاتی ہے ان کے درمیان خدا کے دو بڑے فرشتے جبرائیل علیہ السلام اور میکائیل علیہ السلام بھی موجود ہیں۔

جبرائیل علیہ السلام کمال احترام سے امام کی خدمت میں حاضر ہو کر سلام کرتے ہیں اور کہتے ہیں اے میرے سیدو سردار! اب آپ کی دعا قبول ہو گئی ہے۔(2)

یہاں پرامام زمانہ علیه السلام اپنے ہاتھ کو چہرے پر پھیرتے ہیں اور فرماتے ہیں:

” خدا کی حمد و ثنا کرتا ہوں کہ جس نے اپنے وعدہ کو پورا کیا اور ہمیں زمین کا وارث قرار دیا“ (3)

امام جبرائیل علیہ السلام کی بات سننے کے بعد کس طرح خدا کی حمد و شکر بجا لاتے ہیں۔


1- الإمام الصادق(علیه السلام): «إذا قام القائم نزلت ملائکه بدر...»: الغیبه للنعمانی ص 252.
2- الإمام الصادق(علیه السلام): «فیقول له جبرئیل: یا سیدیّ ، قولک مقبول ، وأمرک جائز...»: مختصر بصائر الدرجات ص 182.
3- الإمام الصادق(علیه السلام): «... فیمسح یده علی وجهه ویقول: الحمد لله الذی صدقنا وعده وأورثناالأرض...»: بحار الأنوار ج 53 ص 6.

ص:38

پس مجھے اور آپ کو بھی خدا کا شکر بجا لانا چاہیے کہ غیبت کے دور کا خاتمہ ہوا اور ظہور کی صبح طلوع ہوئی۔

آپ کی نظر میں ظہور کے وقت امام کا پہلا کام کیا ہے؟

جواب ایک کلمہ سے بڑھ کر نہیں نماز

جی ہاں! امام خانہ کعبہ کے پاس نماز پڑھتے ہیں۔(1)

شاید امام اجازہ ظہور کے بعد بطور شکرانہ نماز پڑھتے ہیں اور شاید وہ نماز کے ساتھ خدا سے مدد طلب کرتے ہیں کیونکہ ان کے سامنے ایک بہت طولانی راستہ ہے کہ جہاں خدا کی مدد کی ضرورت ہے جب نماز مکمل ہو جائے گی وہ اپنی جگہ سے اٹھ کر اپنے ساتھیوں کو بلائیں گے:

اے میرے ساتھیو! اے وہ جنہیں خدا نے میرے ظہور کے لیے ذخیرہ کیا ہے میرے ساتھ آ جاﺅ۔

دیکھو، دیکھو!

اصحاب امام ایک کے بعد ایک خود کو مسجد الحرام میں پہنچا رہے ہیں۔

وہ سب کعبہ کے دروازے کے پاس جمع ہو رہے ہیں۔


1- الإمام الباقر(علیه السلام): «فیقوم القائم بین الرکن والمقام فیصلّی...»: تفسیر العیّاشی ج1 ص 65، بحار الأنوار ج 52 ص 223.

ص:39

اب امام دیوار کعبہ کے ساتھ کھڑے اپنے اصحاب کے ساتھ پہلا خطاب فرمائیں گے۔

آپ اس آیت کی تلاوت کرتے ہیں:

بقیه اللّٰہ خیر لکم ان کنتم مومنین (سورہ ھود،آیت 86(

پھر فرماتے ہیں :" میں بقیۃ اللہ ہوں اور حجت خدا ہوں"(1)

میں جانتا ہوں کہ آپ بقیه اللہ کا معنی جاننا چاہتے ہیں۔

یقینا جانتے ہیں کہ بعض افراد نے قیمتی اشیاءکو جمع کیا ہوتا ہے اور انہیں محفوظ جگہ پر رکھا ہوتا ہے وہ چیزیں ان کا ذخیرہ ہوتی ہیں۔ خدا نے بھی اپنے لیے ذخیرہ جمع کیا ہے، اس نے لوگوں کو ہدایت کے لیے بہت سے انبیاءکو بھیجا۔ تمام انبیاءنے اپنی سعی و کاوش انجام دی لیکن الٰہی حکومت تشکیل نہ پا سکی کیونکہ لوگوں کی آمادگی نہ تھی۔

امام زمانہ خدا کے ذخیرہ ہیں تاکہ پوری دنیا پر خدا کی حکومت قائم کریں۔

جی ہاں، امام بقیه اللہ ہیں وہ خدا کا ذخیرہ ہیں وہ تمام انبیاءکی یاد گار ہیں کتنا خوبصورت منظر ہے ایک شمع اور تین سو تیرہ پروانے۔


1- هود، 86.

ص:40

کیا اُس نور کے ستون کو دیکھ رہے ہیں؟

امام کے اصحاب کے سروں پر ایک نور کا ستون آسمان کی طرف جا رہا ہے۔

یہ ستون کتنا نورانی ہے سب اس کے نور کو دیکھ رہے ہیں۔

یہ خدا کا معجزہ اور ظہور کی علامت ہے تمام لوگ اس نور کو دیکھتے ہیں تو ان کے دل خوش ہو جاتے ہیں۔ (1)

امام کے اصحاب ان کے گرد حلقہ بنائے کھڑے ہیں میں ان کے درمیان اپنے محبوب سے نظریں ہٹا نہیں سکتا۔

دیکھو تو سہی ! امام کی بائیں آستین پرخون کے سرخ نشان دیکھ رہے ہیں؟

ارے امام کا لباس خون آلودہ کیوں ہے؟ کیا انہیں کوئی چوٹ لگی ہے؟

نہیں یہ تو سرخ خون نظر آ رہا ہے یہ ایک علامت ہے یہ بہت پرانا خون ہے یہ آپ کو جنگ احد کے زمانہ میں لے جائے گا۔


1- الإمام الباقر(علیه السلام): «فإذا خرج أسند ظهره إلی الکعبه واجتمع إلیه ثلاثمئه وثلاثه عشر... فأوّل ما ینطق به هذه الآیه: (بَقیَهُ اللهِ خَیْرٌ لَکُمْ إِنْ کُنْتُمْ مُؤمِنینَ)»: کمال الدین ص 331، بحار الأنوار ج 52 ص 192.

ص:41

یہ خون کی سرخی بہت سال پرانی میراث ہے یہ پیغمبر اکرم صلی صلی الله علیه و آله و سلم کے لبوں سے جاری ہونے والا خون ہے۔ جب جنگ احد میں آپ کے دندان مبارک شہید ہوئے اور خون آپ کے کپڑوں پر لگا ۔

آج اسی لباس کو ان کے بیٹے نے زیب تن کیا ہے۔(1)


1- الإمام الصادق(علیه السلام): «فیأمر الله عزّ وجلّ النور فیصیر عموداً من الأرض...»: مختصر بصائر الدرجات ص 182، بحار الأنوار ج 53 ص 6.

ص:42

ص:43

تلوار کہ جو پہاڑ کو ریزہ ریزہ کرے

صبح کی اذان کا وقت ہو رہا ہے امام کے تمام اصحاب نماز صبح کے لیے تیار ہو رہے ہیں۔ نماز برپا ہوتی ہے صبح کی ٹھنڈی ہوا چلتی ہے خدا کے ساتھ مناجات کایہی بہترین وقت ہے۔

نماز کے بعد آپ کے اصحاب آپ کی بیعت و عہد و پہچان کرنا چاہتے ہیں۔

امام کعبہ کے دروازے کے پاس کھڑے ہیں اپنا دایاں ہاتھ آگے بڑھاتے ہیں۔

کیاسفیداس نور کو دیکھ رہے ہیں کہ جو امام کے ہاتھ سے چمک رہا ہے؟

وہ کتنا زیادہ نور ہے اس کے باوجود کسی آنکھ کو تکلیف نہیں دے رہا۔ (1)

غور کرو! امام کے دوسرے ہاتھ میں کیا نظر آ رہا ہے؟ گویا یہ ایک خط امام کے ہاتھوں میں ہے۔


1- الإمام الصادق(علیه السلام) «ألا أُریک قمیص القائم الذی یقوم فیه؟ فقلت بلی، قال: فدعا بقِمَطرففتحه وأخرج منه قمیص کرابیس ، فنشره فإذا فی کُمّه الأیسر دم، فقال: هذا قمیص رسول الله(صلی الله علیه وآله وسلم) وفیه یقوم القائم...»: الغیبه للنعمانی ص 250، بحار الأنوار ج 52 ص 355.

ص:44

جی ہاں! یہ عہد و پہچان ہے کہ جو انبیاءنےامام زمانہ علیه السلام کے ساتھ کیا ہے

انبیاءنے یہ عہد حضرت علی علیہ السلام کو دیا ہے۔ پھر اس کو امام حسن علیہ السلام نے ارث میں لیا ہے اسی طرح ایک امام سے ہوتے ہوئے دوسرے امام اور ابامام زمانہ علیه السلام کے ہاتھوں میں پہنچا ہے۔(1)

امام اپنے دائیں ہاتھ کو آگے بڑھاتے ہیں اور کہتے ہیں یہ خدا کا ہاتھ ہے۔

کیا جانتے ہیں کہ اس امام کی کیا مراد ہے؟

امام اس آیت کو پڑھتے ہیں: ان الذین یبا یعونک انما یبا یعون اللّٰہ

” وہ جو آپ کے ہاتھ پہ بیعت کرے گا گویا خدا کی بیعت کر رہا ہے۔" (2)

جی ہاں! امام کا ہاتھ خدا کا ہاتھ ہے۔

اچھی طرح دیکھو کیاآپ پہچان سکتے ہو کہ سب سے پہلے امام کے ہاتھ میں کون ہاتھ دے رہا ہے؟


1- الإمام الصادق(علیه السلام): «ویمدّ یده فتُری بیضاء من غیر سوء ، ویقول: هذه ید الله...»: مختصر بصائر الدرجات ص 183، الهدایه الکبری ص 397.
2- الإمام الباقر(علیه السلام): «ومعه عهد من رسول الله قد توارثه الأبناء عن الآباء»: الاختصاص ص 257.

ص:45

یہ جبرائیل علیہ السلام ہیں جو جھک کر امام کے ہاتھوں کا بوسہ لے رہے ہیں اور ان کی بیعت کر رہے ہیں اس کے بعد تمام فرشتے امام کی بیعت کریں گے۔(1)

اب امام کے دوستوں (اصحاب) کی بیعت کرنے کی باری ہے۔

امام ان سے مخاطب ہوتے ہیں: " تمہیں برائیوں اور گناہوں سے بچنا ہو گا اور ہمیشہ امر بالمعروف اور نہی عن المنکر کرو اور کبھی زمین پر بے گناہ خون نہ بہاﺅ، مال و دولت دنیا کو جمع کرنے سے پرہیز کرواپنی خوراک اور رہن سہن سادہ ہو۔(2)

البتہ اگر اصحاب امام ان شرائط کو قبول کر لیں ,امام سے وعدہ بھی کریں کہ ہرگز کوئی غیر ان کا ہم نشیں نہ ہو گا۔

اصحاب امام ان شرائط کو قبول کرتے ہیں اور امام کی بیعت کرتے ہیں۔

اے میرے ہمسفر! ذرا ان باتوں پر غور کرو۔


1- الفتح: 10.
2- الإمام الصادق(علیه السلام): «هذه ید الله وعن الله وبأمر الله... فیکون أوّل من یقبّل یده جبرئیل ثمّ یبایعه...»: بحار الأنوار ج 53 ص 8.

ص:46

ٹھیک ہے کہ یہ تین سو تیرہ افراد مستقبل میں دنیا کے حکمران ہوں گے ان میں سے ہر ایک کسی ملک کا حاکم ہو گا لیکن امام سے عہد کیا ہے کہ سادگی اپنائیں گے۔

بلاوجہ وہ اس مقام تک نہیں پہنچے کہ جو امام کے اصحاب اور نمائندے بنے ہیں۔

یہ عہد جو امام نے اپنے اصحاب کے ساتھ کیا ہے اس عدالت کا ایک نمونہ ہے جس کی سب انتظار کر رہے ہیں۔

جی ہاں!امام زمانہ علیه السلام اپنے اصحاب سے بیعت لیتے ہیں کہ وہ قرآن و سنت کے مطابق عمل کریں۔(1)

دیکھو! آسمان سے ایک تلوار نازل ہو رہی ہے۔(2)

تمام تین سو تیرہ افراد کے لیے ایک خاص تلوار نازل ہوتی ہے۔

ہر کوئی اپنی تلوار کو اٹھاتا ہے کوئی بھی غلطی سے دوسرے کی تلوار نہیں اٹھاتا۔ کیونکہ ہر تلوار پر اس کا نام لکھا ہوتا ہے۔


1- أمیر المؤمنین(علیه السلام): «یقول المهدیّ:... أُبایعکم علی أن لا تولّون دابراً ، ولا تسرقون ، ولا تزنون ، ولا تفعلون محرّماً...»: معجم أحادیث الإمام المهدی(علیه السلام) ج 2 ص 106.
2- الإمام الصادق(علیه السلام): «...یبایع الناس علی کتاب جدید...»: الغیبه للنعمانی ص 200، بحار الأنوار ج 52 ص 272.

ص:47

عجیب ہے کہ ہر تلوار پر ہزارکوڈ ورڈ لکھے ہیں۔ جن سے ایک ہزار دوسرے مطلب سمجھے جاتے ہیں۔(1)

وہ ہر کلمہ سے ہزار دیگر کلمات سمجھتے ہیں خدا نے اصحاب امام کے لیے ان کلمات کو تیار کیا ہے تاکہ مختلف اوقات میں ان کلمات سے استفادہ کریں۔

تعجب یہ ہے کہ اصحاب امام ان تلواروں سے دشمن کے خلاف کیسے جنگ کریں گے ان کے دشمنوں کے پاس جدید ترین اسلحہ موجود ہے؟

ان میں سے ایک کے پاس جاتے ہیں اور اس سے پوچھتے ہیں۔

وہ اپنی تلوار مجھے دیتا ہے اور کہتا ہے کہ اسے دیکھوں۔

میں اس تلوار کو ہاتھ میں لیتا ہوں کوشش کے باوجود یہ تشخیص نہیں دے سکتا کہ وہ کس چیز کی بنی ہوئی ہے۔

وہ کہتا ہے: کیا جانتے ہو اس تلوار سے پہاڑ کو ریزہ ریزہ کیا جا سکتا ہے؟

جی ہاں یہ تلوار اتنی قدرت رکھتی ہے کہ اگر کس پہاڑ پر بھی ماری جائے تو اس کو ریزہ ریزہ کر سکتی ہے۔(2)


1- الإمام الصادق(علیه السلام): «إذا قام القائم نزلت سیوف القتال ، علی کلّ سیف اسم الرجل واسم أبیه...»: الغیبه للنعمانی ص 251، بحار الأنوار ج 52 ص 356.
2- الإمام الصادق(علیه السلام): «مکتوب علی کلّ سیف اسم الرجل واسم أبیه وحِلیَته ونسبه...»: الغیبه للنعمانی ص 327، جامع أحادیث الشیعه ج 25 ص 49.

ص:48

کئی مرتبہ لوگ مجھ سے سوال کرتے تھے کہ امام زمانہ علیه السلام کیسے ایک تلوار سے پوری دنیا پراقتدار حاصل کریں گے؟

آج مجھے اس کا جواب ملاہے،اگر اصحاب امام کی تلوار پہاڑ کو ریزہ ریزہ کرسکتی ہے ،پس تو امام کی تلوار کیا کیا کر سکتی ہوگی؟

جی ہاں! امام کے ہر کمانڈر کے ہاتھ میں ایہ ایک انتہائی ترقی یافتہ اسلحہ جو تلوار کی شکل میں ہے کہ جو کسی لوہے سے بنا ہوا نہیں بلکہ جدید ترین ٹیکنالوجی کا شاہکار ہے۔

اس اسلحہ میں کیا خصوصیت چھپی ہوئی ہے؟

نہیں جانتا صرف یہ پہاڑوں کو ریزہ ریزہ کرتی ہے۔

اس اسلحہ کو خدا نے بنایا ہے اور خدا کا ہاتھ تو سب کے ہاتھوں سے بلند ہے۔

ص:49

ص:50

کعبہ کے پاس کیا ہورہا ہے؟

اب جبکہ سورج نکل آیا ہے مکہ کے لوگوں کو پتہ چلتا ہے کہ مسجد الحرام میں کچھ خاص خبریں ہیں۔

وہ ایک دوسرے سے سوال کرتے ہیں: یہ کون ہے کہ جو کعبہ کے پاس کھڑا ہے اور کچھ لوگوں نے اسے گھیرا ہوا ہے؟

اس دوران ہر جگہ آواز آتی ہے۔(1)

غور سے سنو! یہ جبرائیل علیہ السلام کی آواز ہے: اے لوگو! یہ مھدی آل محمد ہیں ان کی پیروی کرو۔(2)

تمام لوگ اس آواز کو سنتے ہیں۔(3)

عجیب یہ ہے کہ ہر کوئی اس آواز کو اپنی زبان میں سنتا ہے اگر عرب ہے تو عربی میں اگر فارس ہے تو فارسی میں، اگر پاکستانی ہے تو اُردو میں۔(4)

جب لوگ اس آواز کو سنتے ہیں تو ایک دوسرے سے ظہور کے بارے میں بات کرتے ہیں اور سمجھ جاتے ہیں کہ خدا کا وعدہ پورا ہو گیا ہے۔(5)


1- الإمام الصادق(علیه السلام): «... لهم سیوف من حدید غیر هذا الحدید ، لو ضرب أحدهم بسیفه جَبَلاً لَقدَّه حتّی یفصله»: بصائرالدرجات ص 512، مختصر البصائر ج 6 ص 27، بحار الأنوار ج 27 ص 43.
2- الإمام الباقر(علیه السلام): «فینادی المنادی بمکّه باسمه... حتّی یسمعه أهل الأرض کلّهم...»: بحار الأنوار ج 52 ص 222، تفسیر العیّاشی ج 1 ص 65.
3- الإمام الصادق(علیه السلام): «فإذا طلعت الشمس وأضاءت صاح صائح بالخلائق: یا معشر الخلائق ،هذا مهدی آل محمّد... فأوّل من یقبّل یده الملائکه ثمّ الجنّ ثمّ النقباء ، ویقولون: سمعنا وأطعنا...»: مختصر بصائر الدرجات ص 183، بحار الأنوار ج 53 ص 8.
4- قلت لأبی عبد الله(علیه السلام): «النداء حقّ؟ قال: أی والله حتّی یسمعه کلّ قوم بلسانهم»: الغیبه للنعمانی ص 283، بحار الأنوار ج 52 ص 244.
5- الإمام الصادق(علیه السلام): «ینادی مناد باسم القائم(علیه السلام)... یُسمع کلّ قوم بلسانهم...»: کمال الدین ص 650، بحار الأنوار ج 52 ص 205.

ص:51

مکہ کے لوگ یہ آواز سننے کے بعد مسجد الحرام کی طرف بڑھتے ہیں تاکہ دیکھیں وہاں کیا ہو رہا ہے۔

وہ دیکھتے ہیں کہ اصحاب امام علیه السلام، امام علیه السلام کے ساتھ جمع ہیں۔

اب امام لوگوں کے ساتھ بات کرنا چاہتے ہیں آپ کی رائے میں امام کی پہلی بات کیا ہو گی؟

امام کعبہ کے پاس جا کر دیوار کعبہ کا سہارا لے کر کھڑے ہوتے ہیں اور یہ کہتے ہیں۔

" اے لوگو! میں مھدی حضرت پیغمبر اکرم صلی الله علیه و آله و سلم کا بیٹا ہوں جو کوئی آدم، ابراہیم، موسیٰ، عیسیٰ اور محمد کو دیکھنا چاہتا ہے مجھے دیکھے۔ اے لوگو! میں تم سے مدد طلب کرتا ہوں کون ہے جو میری مدد کرے گا؟ " (1)

اب مکہ کے لوگوں کو بہت بڑا امتحان پیش آ جاتا ہے باوجود اس کے کہ امام ہزار سال سے زیادہ عمر رکھتے ہیں لیکن ایک جوان کی شکل میں ظہور کرتے ہیں۔(2)


1- أمیر المؤمنین(علیه السلام): «فعند ذلک یظهر المهدیّ علی أفواه الناس ، ویشربون حبّه ، فلا یکون لهم ذکر غیره»: الملاحم والفتن ص 128، کنز العمّال ج 14 ص 587.
2- الإمام الباقر(علیه السلام): «فینادی: أیّها الناس إنّا نستنصر الله ، فمن أجابنا من الناس؟»: الغیبه للنعمانی ص 29، الاختصاص ص 256، بحار الأنوار ج 52 ص 238.

ص:52

مکہ کے لوگ شک و تردید میں ہیں کچھ لوگ یقین نہیں کرتے کہ یہ وہی مھدی ہیں۔(1)

وہ چالاکی کرتے ہیں اور فیصلہ کرتے ہیں کہ امام کو قتل کر دیں لیکن بھول گئے ہیں کہ امام کے کتنے باوفا اصحاب ہیں جنہوں نے عہد کیا ہے کہ آخری سانس تک امام کا دفاع کریں گے۔(2)

جب لوگ دیکھتے ہیں کہ امام کے اصحاب دفاع کے لیے تیار ہیں تو پشیمان ہو جاتے ہیں اور مسجد الحرام کو ترک کر دیتے ہیں۔


1- الإمام الصادق(علیه السلام): «من أعظم البلیه أن یخرج إلیهم صاحبهم شابّاً وهم یحسبونه شیخاًکبیراً»: الغیبه للنعمانی ص 194، بحار الأنوار ج 2 ص 287.
2- أمیر المؤمنین(علیه السلام): «یُبعث وهو ما بین الثلاثین وإلی الأربعین»: الملاحم والفتن ص 154.

ص:53

ص:54

شیطان کی آوا ز کاسنائی دینا

ایک مدت کے بعد لوگوں نے جبرائیل علیہ السلام کی آواز کو سنا ہے ان کے دل امام کی طرف مائل ہو چکے ہیں سب چاہتے ہیں کہ امام کو دیکھیں۔ (1)

ٹھیک ہے کوفہ و مدینہ ابھی تک سفیانی کے قبضہ میں ہے لیکن اگر ان دو شہروں میں جائیں تو دیکھیں گے کہ سفیانی کے سپاہی اپنے کمانڈر کے حق ہونے میں شک کر رہے ہیں اور چاہتے ہیں کہ سفیانی کی قید سے چھٹکارہ پا کر امام کے ساتھ مل جائیں۔

شیطان چونکہ انسانوں کی سعادت کا دشمن ہے چاہتا ہے کہ ہر طریقہ سے لوگوں کو گمراہ کرے اب بھی لوگوں کو دھوکہ دینے کی سوچ رہا ہے کہ لوگ امام کے ساتھ نہ مل سکیں۔

وہ جانتا ہے کہ امام زمانہ علیه السلام کے ظہور کے بعددنیا پر خدا کے نیک لوگوں کی حکومت ہو گی اور برے لوگوں کے لیے زمین پر ٹھکانہ نہ ہو گا۔


1- الإمام السجّاد(علیه السلام): «فیقومون إلیه لیقتلوه، فیقوم ثلاثمئه وینیف علی الثلاثمئه فیمنعونه منه»: بحار الأنوار ج 52 ص 199.

ص:55

اسی لیے جب غروب آفتاب کا وقت ہوتا ہے شیطان کی آواز بلند ہوتی ہے۔ شیطان بلند آواز سے پوری دنیا کے لوگوں سے خطاب کرتا ہے اور کہتا ہے اے لوگو! آگاہ رہو کہ سفیانی اور اس کے اصحاب برحق ہیں۔ (1)

تمام لوگ اس آواز کو سنتے ہیں لیکن نہیں جانتے کہ یہ شیطان کی آواز ہے کچھ گمراہ جو جاتے ہیں وہ شیطان کا دھوکہ کھا جاتے ہیں اورامام زمانہ علیه السلام سے بےزاری کا اظہار کرتے ہیں۔(2)

مجھے ان لوگوں پر افسوس ہو رہا ہے کہ کیسے شیطان کے جال میں پھنس گئے ہیں۔

آئمہ معصومین علیہم السلام کے ارشادات میں آیا ہے۔

کہ زمانہ ظہور میں دو آوازیں بلند ہوں گے۔

پہلی آواز کہ طلوع آفتاب کے نزدیک ہے کانوں میں پڑے گی جو جبرائیل علیہ السلام کی آواز ہے اور غروب کے وقت جو آواز سنائی دے گی وہ شیطان کی آواز ہے۔


1- الإمام الصادق(علیه السلام): «فلا یبقی فی الأرض یومئذ أحد إلاّ خضع وذلّت رقبته لها»: الغیبه للنعمانی ص 268، بحار الأنوار ج 52 ص 292.
2- الإمام الصادق(علیه السلام): «صعد إبلیس فی الهوا حتّی یتواری عن أهل الأرض ، ثمّ ینادی...»: الغیبه للنعمانی ص 268، بحار الأنوار ج 52 ص 268. عن الإمام الصادق(علیه السلام): «ثمّ ینادی إبلیس لعنه الله فی آخر النهار: الا أنّ الحقّ فی السفیانیوشیعته...»: کمال الدین ص 652، بحار الأنوار ج 52 ص 206. وعن الإمام الصادق(علیه السلام): «إنّ الشیطان لا یدعهم حتّی ینادی کما نادی برسول الله یوم العقبه»: الغیبه للنعمانی ص 273

ص:56

شیعہ چونکہ پہلے سے اس بات کو جانتے ہیں لہٰذا دھوکہ نہ کھائیں گے وہ جانتے ہیں کہ حکومت عدل بہت نزدیک ہے۔(1)


1- الإمام الصادق(علیه السلام): «فعند ذلک یتبرّون منّا ویتناوّلونا...»: بحار الأنوار ج 52 ص 293.

ص:57

لشکر سفیانی کازمین میں دھنس جانا

آج چودہ محرم کی رات ہے شہر مکہ کا آسمان بھی مہتابی ہے (چاند کی روشنی سے دمک رہا ہے) امام کے ظہور کی چوتھی رات ہے شہر مکہ میں آرام و سکون ہے البتہ شہر سے باہر سفیانی کی فوج نے شہر کا محاصرہ کر رکھا ہے۔ (1)

لشکر سفیانی ڈرتا ہے کہ شہر میں داخل ہو اور امام کے لشکر کے ساتھ جنگ کرے۔

وہ انتظار کر رہے کہ مدینہ سے ان کے مدد گار بھی آ جائیں تاکہ امام کے ساتھ جنگ کر سکیں۔ آج کی رات مدینہ سے سفیانی کے تین لاکھ سپاہی مکہ کی جانب حرکت کرتے ہیں سفیانی نے انہیں حکم دیا ہے کہ شہر مکہ پر قبضہ کرو، کعبہ کو منہدم ،اور امام کو قتل کر دو یہ سفیانی کا منصوبہ ہے۔(2)

جی ہاں!امام زمانہ علیه السلام کے پاس تو صرف تین سو تیرہ سپاہی ہیں کیسے وہ تین لاکھ سے زائد فوج کا مقابلہ کریں گے؟

میں جانتا ہوں کہ خدا ہرگز اپنے ولی کو تنہا نہیں چھوڑے گا۔


1- الإمام الصادق(علیه السلام): «ینادی مناد من السماء أوّل النهار یسمعه کلّ قوم... فیثبّت الله الذین آمنوابالقول الثابت علی الحقّ ، وهو النداء الأوّل»: الغیبه للنعمانی ص 268.
2- ابن عبّاس: «فإذا أتوا البیداء، فنزلوها فی لیله مقمره»: کتاب الفتن للمروزی ص 202.

ص:58

سفیانی کا لشکر مدینہ سے مکہ کی جانب روانہ ہوتا ہے مدینہ سے خارج ہونے کے بعد سر زمین ”بیدا“ میں مستقر ہوتا ہے۔(1)

کیا جانتے ہیں کہ سر زمین ”بیدا“ کہاں ہے؟

تقریباً مدینہ سے مکہ کی طرف جاتے ہوئے پندرہ کیلومیٹر باہر نکلیں تو ”بیدا“ نامی جگہ آتی ہے۔

تھوڑی سی رات گزرتی ہے۔

وہ کون مرد ہے جو آہستہ آہستہ اس سمت آ رہا ہے؟

دیکھو! ظاہر سے لگتا ہے کہ وہ اہل مکہ نہیں ہے وہ کسی اور راستہ سے آ رہا ہے۔ وہ شخص امام کا پوچھتا ہے گویا اسے کوئی اہم کام ہے۔ امام کے ساتھی اسے امام کے خدمت میں پیش کرتے ہیں۔

وہ شخص آ کر کہتا ہے: اے میرے آقا! مجھے آپ کو ایک خوشخبری سنانے کا حکم دیا گیا ہے ایک فرشتے نے مجھے حکم دیا ہے کہ آپ کے پاس آﺅں۔(2)


1- الإمام الصادق(علیه السلام): «فیقول الرجل:... نرید إخراب البیت وقتل أهله»: بحار الأنوار ج 3 ص 10.
2- «البیداء: اسم لأرض ملساء بین مکّه والمدینه، بطرف المیقات المدنی الذی یُقال له ذو الحلیفه»: معجم البلدان ج 1 ص 523، تاج العروس ج 4 ص 368. عن الإمام الصادق(علیه السلام): «فیقول الرجل: عددنا ثلاثمئه ألف رجل نرید إخراج البیت وقتل أهله»: بحار الأنوار ج 53 ص 10.

ص:59

میں اس ماجرا کو نہیں جانتا، اس شخص کی بات سے تعجب کرتا ہوں کیسے ممکن ہے کہ یہ شخص دعویٰ کر رہا ہے کہ اس نے فرشتوں کو دیکھا ہے؟

امام جو کہ ہر چیز سے آگاہ ہیں کہتے ہیں بتاﺅ: اپنی بات مجھے بتاﺅ۔

وہ شخص امام کو مخاطب کر کے کہتا ہے:

میں آیا ہوں کہ آپ کو اطلاع دوں کہ سفیانی کالشکرنابود ہو گیا ہے میں اور میرا بھائی سفیانی کے لشکر میں تھے اور سفیانی کے حکم پر مکہ پر قبضہ کرنے کے لیے نکلے تھے جب سرزمین بیدا پہنچے تو رات کی تاریکی چھا گئی اسی لیے اس صحرا میں قیام کیا۔

اچانک اس بیابان میں ایک آواز سنائی دی: اے صحرا بیدا اس ظالم قوم کو اپنے اندر نگل لو۔(1)

میں نے اپنی آنکھوں سے دیکھا کہ تمام سپاہی اس میں گڑ ھ گئے فقط میں او ر میرا بھائی باقی بچے اس فوج کا کوئی نام و نشان باقی نہیں بچا ، میں اور میرا بھائی مبہوت رہ گئے۔


1- «یا سیّدی، أنا بشیر، أمرنی ملک من الملائکه أن ألحق بک...»: مختصر بصائر الدرجات ص 182، بحار الأنوار ج 53 ص 6.

ص:60

اچانک ایک فرشتہ نمودار ہوا اور میرے بھائی کو آواز دی اور کہا: اب سفیانی کے پاس جاﺅ اور اس بات کی خبر دو اس کا لشکر زمین نے نگل لیا ہے۔ پھر وہ میری طرف مخاطب ہوا اور کہا: مکہ جاﺅامام زمانہ علیه السلام کو اس کے دشمنوں کی نابودی کی اطلاع دو اور توبہ کرو۔(1)

اب میرے لیے بہت سی چیزیں واضح ہو گئی ہیں۔

جی ہاں! خدا نے اپنا وعدہ پورا کیا اور دشمن امام زمانہ علیه السلام کو نابود کر دیا۔

وہ شخص چونکہ اپنے کیے پر پشیمان ہے جب امام مہربان کو دیکھتا ہے توبہ کرتا ہے اور اس کی توبہ قبول ہو جاتی ہے۔

کیا جانتے ہیں کہ جس فرشتہ نے اس شخص کے ساتھ بات کی کون تھا؟

وہ آواز جو صحرائے ”بیدا“ میں بلند ہوئی کیا تھی؟

وہ جبرائیل علیہ السلام تھے کہ جو حکم خدا سے آئے تھے کہ اس لشکر کو نابود کریں۔ (2)


1- الإمام الباقر(علیه السلام): «فینادی مناد من السماء: یا بیداء أبیدی القوم ، فیخسف بهم البیداء...»: الاختصاص ص 256، تفسیر العیّاشی ج 1 ص 245.
2- الإمام الصادق(علیه السلام): «فیقول الرجل:... فلمّا صرنا فی البیداء عرسنا فیها ، فصاح بنا صائح: یابیداء أبیدی القوم الظالمین ، فانفجرت الأرض وابتلعت کلّ الجیش ، فإذا نحن بملک قد ضرب وجوهنا فصارت إلی وراءنا کما تری ، فقال لأخی: ویلک یا نذیر، امضِ إلی الملعون السفیانی... وقال لی: یا بشیر الحق بالمهدی بمکّه وبشّره بهلاک الظالمین...»: مختصر بصائر الدرجات ص 182، بحار الأنوار ج 53 ص 6.

ص:61

لشکر سفیانی چاہتا تھا کہ کعبہ کو خراب کرے اورامام زمانہ علیه السلام کے ساتھ جنگ کرے تو خدا کے عذاب میں گرفتار ہو گیا اور زمین کے اندر دفن ہو گیا۔ (1)

سفیانی کے لشکر کی تباہی کی خبر ہر جگہ پھیل گئی اور جنہوں نے پہلے سے مکہ کا محاصرہ کر رکھا تھا اس خبر کو سنتے ہی فرار کر گئے۔

سفیانی شہر کوفہ میں ہے اس خبر کے سنتے ہی اس کا جسم خوف سے کانپنے اور مکہ پر حملہ کی سوچ اپنے دماغ سے نکال دی۔


1- رسول الله(صلی الله علیه وآله وسلم): «بعث الله سبحانه جبرئیل فیقول: یا جبرئیل اذهب فأبدهم...»: تفسیر الثعلبی ج 8 ص 95، تفسیر القرطبی ج 14 ص 315.

ص:62

ص:63

دس ہزار کے لشکر آنا

مکہ کے لوگ جب سفیانی کے لشکر کی تباہی کی خبر سنتے ہیں بہت ڈر جاتے ہیں اسی لیے شہر میں سکون ہو جاتا ہے اب کوئی امام سے دشمنی کرنے کی نہیں سوچتا۔

امام کی عالمی حکومت کا دارالخلافہ شہر کوفہ ہے میں انتظار کر رہا ہوں کہ کوفہ کی جانب سفر کروں۔

میں سننا چاہتا ہوں کہ امام کب کوفہ کی جانب روانہ ہوں گے، امام کے ایک قریبی صحابی کے پاس جاتا ہوں اور اس سے پوچھتا ہوں امام کوفہ کی جانب کیوں روانہ نہیں ہو رہے؟

وہ جواب میں کہتا ہے: امام انتظار کر رہے ہیں کہ ان کا تمام لشکر مکہ میں آ جائے۔

جی ہاں، جس وقت جبرائیل علیہ السلام نے آواز دی اور لوگوں کو امام کی جانب دعوت دی بہت سے لوگ مکہ کی جانب چل دیے انہیں مکہ کی

ص:64

جانب دعوت دی گئی ہے اور ان کی ذمہ داری ہے کہ امام کے ساتھ ملحق ہوں۔(1)

کیا آپ نے کبھی دیکھا ہے کہ پرندے کس طرح اپنے گھونسلوں میں پناہ لیتے ہیں؟

یہ لوگ بھی اسی طرح مکہ کی جانب روانہ ہوتے ہیں اور امام کی خدمت میں حقیقی آرام پاتے ہیں۔(2)

خدا کا ارادہ یہ ہے کہ امام اس دس ہزار کے لشکر کے ساتھ مکہ سے خارج ہوں۔(3)

اگر مکہ سے نکلیں تو دیکھیں گے کہ شیعہ کس شوق کے ساتھ مکہ کی جانب بڑھ رہے ہیں جیسے کوئی مقابلہ منعقد ہو رہا ہو کہ کون سب سے پہلے امام کی خدمت میں حاضر ہو گا۔(4)

یہ وہ شوق ہے کہ جو خداوند عالم نے شیعوں کے دل میں رکھا ہے کہ انہیں اس طرح بے قرار رکھا ہے۔(5)


1- رسول الله(صلی الله علیه وآله وسلم): «لیؤمن هذا البیت جیش یغزونه ، حتّی إذا کانوا ببیداء من الأرض یُخسف بأوسطهم...»: صحیح مسلم ج 8، 167، سنن ابن ماجه ج 2 ص 1350، سنن النسائی ج 5 ص 207، المستدرک للحاکم ج 4 ص 429، السنن الکبری ج 2 ص 385، المعجم الکبیر ج 24 ص 75، الجامع الصغیر ج 2 ص 445، التاریخ الکبیر ج 5 ص 119.
2- الإمام الصادق(علیه السلام): «یصبح أحدکم وتحت رأسه صحیفه علیها مکتوب: طاعه معروفه»: کمال الدین ص 654، بحار الأنوار ج 52 ص 305. عن رسول الله(صلی الله علیه وآله وسلم): «إذا کان عن خروج القائم ینادی مناد من السماء... فالحقوا بمکّه»: الاختصاص ص 208، بحار الأنوار ج 52 ص 304.
3- رسول الله(صلی الله علیه وآله وسلم): «تؤوب إلیه أُمّتی کما تؤوب الطیر إلی أوکارها»: دلائل الإمامه ص 445، الدرّ النظیم ص 799.
4- الإمام الصادق(علیه السلام): «ومایخرج إلاّ فی أولی قوّه ، وما یکون أولو قوّه إلاّ عشره آلاف...»: کمال الدین ص 654، التفسیر الصافی ج 4 ص 65، بحار الأنوار ج 52 ص 323.
5- «ویتسارع الناس إلیه من کلّ وجه ، ویملأ الأرض عدلاً»: الملاحم والفتن ص 140، کتاب الفتن للمروزی ص 217.

ص:65

وہ مقدس عشق کے ساتھ بیابانوں کو گزارتے ہوئے راہ امام میں تمام سختیوں کو برداشت کر رہے ہیں۔(1)

آپ خود جانتے ہیں کہ تین سو تیرہ افراد کس طرح مکہ میں داخل ہوئے وہ طی الارض کے ذریعہ مکہ میں داخل ہوئے اس لیے کہ وہ کمانڈر ہیں اور مستقبل قریب میں پوری دنیا میں امام کے نمائندے ہوں گے۔(2)

لیکن یہ دس ہزار لوگامام زمانہ علیه السلام کا لشکر ہیں وہ قائم آل محمد کی مدد کے لیے آ رہے ہیں۔


1- «یقذف الله محبّته فی قلوب الناس فیسیر...»: کتاب الفتن للمروزی ص 217.
2- الإمام الصادق(علیه السلام): «یا سدیر ، الزم بیتک وکن حِلساً من أحلاسه ، واسکن ما سکن اللیل والنهار ، فإذا بلغک أنّ السفیانی قد خرج فارحل إلینا ولو علی رجلک»: الکافی ج 8 ص 265، بحار الأنوار ج 52 ص 271.

ص:66

ص:67

ناصرین امام علیه السلام

آہستہ آہستہ دس ہزار لشکر کی تعداد پوری ہو رہی ہے وہ ایک دوسرے کے ساتھ بہت مہربان ہیں گویا کہ ایک دوسرے کے بھائی ہیں۔(1)

اے میرے ہمسفر! کیا اجازت دیں گے کہ ان افراد کی خصوصیات کے بارے میں بات کریں؟

وہ امام کے حکم کے سامنے سر تسلیم خم کیے ہوئے ہیں اور امام کی بات کو جان سے زیادہ عزیز سمجھتے ہیں۔(2)

بہادر اور نڈر لوگ ہیں ان کے دل میں ذرہ برابر خوف نہیں جی ہاں! امام کو بھی بہادر اور یقین کامل والے افراد کی ضرورت ہے کمزور دل اور سست عقیدہ والے لوگ اس راستہ پر نہیں چل سکتے؟

لشکر امام کے افراد کا عقیدہ اور ایمان اتنا مضبوط ہے کہ شیطان انہیں گمراہ نہیں کر سکتا یہ پختہ ایمان والے شہر میں جو حق و حقیقت کے ساتھ ہیں۔ (3)


1- الإمام الصادق(علیه السلام): «هم النجباء والفقهاء ، وهم الحکّام ، وهم القضاه»: دلائل الإمامه ص 562، الملاحم والفتن ص 380.
2- «وإنّ أصحاب القائم یلقی بعضهم بعضا کأنّهم بنو أب وأُمٍّ»: دلائل الإمامه ص 562، الملاحم والفتن ص 380.
3- الإمام الصادق(علیه السلام): «هم أطوع له من الأمه لسیّدها...»: بحار الأنوار ج 52 ص 307.

ص:68

اگر رات کو ان کے پاس جائیں ،تو دیکھیں گے وہ عبادت میں مصروف ہیں ان کے گریہ و مناجات کی آوازیں سنائی دیتی ہیں دن میں بہادر شیروں کی طرح میدان میں آتے ہیں اور انہیں کسی چیز کا نہ کوئی خوف ہے نہ ڈر۔

شہادت کی دعا کرتے ہیں ان کی خواہش یہ ہے کہ امام کی رکاب میں شہید ہوں جی ہاں! اس سے بڑھ کر کیا سعادت ہے کہ انسان اپنی جان امام پر قربان کر دے۔(1)

کیا اس فانی دنیا میں اس سے بڑھ کر کوئی خواہش ہو سکتی ہے؟

خوش نصیب ہیں وہ لوگ جن کے دلوں میں یہ خواہش ہے۔

یقینا انسان کی زندگی ان اہداف کے ساتھ کتنی لذت بخش ہو جاتی ہے۔

بہر حال اصحاب امام ، امام کے گرد جمع ہیں اور سخت ترین شرائط میں امام کے ساتھ ہیں۔(2)

کافی ہے کہ امام انہیں حکم دیں اس وقت دیکھیں کہ یہ کس طرح حکم امام یہ عمل کرتے ہیں۔(3)


1- الإمام الصادق(علیه السلام): «رجال کأنّ قلبوهم زبر الحدید لا یشوبها شکّ فی ذات الله ، أشدّ من الحجر...»: بحار الأنوار ج 52 ص 308.
2- الإمام الصادق(علیه السلام): «... رهبان باللیل لیوث بالنهار... یدعون بالشهاده ویتمنّون أن یُقتلوا فی سبیل الله...»: بحار الأنوار ج 52 ص 308، مستدرک الوسائل ج 11 ص 114.
3- الإمام الصادق(علیه السلام): «... ویحفّون به، یقونه بأنفسهم فی الحرب...»: بحار الأنوار ج 52 ص 308.

ص:69

خدا نے انہیں اچھی جسمانی طاقت دی ہے کہ اپنے امام کا دفاع کر سکیں ۔(1)

جب وہ کسی سر زمین سے گزرتے ہیں تو وہ زمین دوسری زمینوں پر فخر کرتی ہے کہ صحابی امام اس پر سے گزرا ہے۔(2)

تمام مخلوقات اصحاب امام کی فرمانبردار ی کرتی ہیں حتیٰ کہ پرندے اور وحشی جانور بھی۔(3)


1- رسول الله(صلی الله علیه وآله وسلم): «کدّادون مجدّون فی طاعته...»: عیون أخبار الرضا ج 2 ص 64.
2- الإمام الباقر(علیه السلام): «وجعل قوّه الرجل منهم قوّه أربعین رجلاً...»: الکافی ج 8 ص 294، الخصال ص 541، شرح الأخبار ج 3 ص 569، مشکاه الأنوار ص 151.
3- الإمام الباقر(علیه السلام): «حتّی تفخر الأرض علی الأرض وتقول: مرّ بی الیوم رجل من أصحاب القائم...»: الإمامه والتبصره ص 131، کمال الدین ص 673.

ص:70

ص:71

نہ جلنے والا لباس اور حیرت انگیز عصا

اب امام کے تمام اصحاب مکہ جمع ہو گئے ہیں وہ آئے ہیں تاکہ امام پر اپنی جان قربان کریں۔

امام جنگی لباس پہن کر مدینہ کی جانب روانگی کے لیے تیار ہوتے ہیں ۔

کیا آپ جانتے ہیں کہ امام کا جنگی لباس وہی حضرت یوسف کی قمیض ہے؟

ارے امام نے یہ لباس کیوں پہنا ہے؟

کیاآپ جانتے ہیں کہ امام کا یہ لباس کوئی معمولی لباس نہیں ہے بلکہ یہ وہ لباس ہے جیسے آگ نہیں لگ سکتی۔(1)

تعجب نہ کریں آئیں آپ کو تاریخی واقعہ سناتا ہوں۔

حضرت یوسف کی قمیض دراصل حضرت ابراہیم کی قمیض تھی۔

جب نمرود نےچاہا تھا کہ خدا پرستی کے جرم میں حضرت ابراہیم کو آگ میں ڈالے، حضرت جبرائیل علیہ السلام زمین پر آئے تاکہ توحید کے پرچم دار


1- الإمام الباقر(علیه السلام): «لیس من شیء إلاّ وهو مطیع لهم ، حتّی سباع الأرض وسباع الطیر...»: بحار الأنوار ج 52 ص 673.

ص:72

کی مدد کریں وہ جنت سے ان کے لیے لباس لائے۔جس کی وجہ سے آگ حضرت ابراہیم علیہ السلام کو نہ جلا سکی۔(1)

پھر حضرت ابراہیم علیہ السلام کا یہ لباس ان کی اولاد کو وراثت میں ملا اور حضرت یوسف تک پہنچ گیا اور حضرت یعقوب علیہ السلام کی آنکھوں کی روشنی کا باعث بنا۔

یہ لباس نسل بہ نسل ہوتا ہوا پیغمبر اسلام تک پہنچا اور پھر بعد میں آئمہ معصومین علیہم السلام کو ایک دوسرے سے وراثت میں ملا۔(2)

اب واضح ہوا کہ کیوں خدا نے اس لباس کوامام زمانہ علیه السلام تک محفوظ رکھا؟

اے میرے ہمسفر! کیا اس زمانہ میں نمرود کی آگ کوئی معمولی آگ تھی؟

اس آگ کے شعلے آسمان سے لگ رہے تھے۔

نمرود نے اس آگ کو جلانے کے لیے اپنے تمام امکانات سے استفادہ کیا اور حضرت ابراہیم علیہ السلام کو اس کے درمیان پھینک دیا ؛لیکن خدا نے اپنے نبی کو اس لباس کے ذریعہ بچایا اور آج وہ لباس امام کے پاس ہے


1- «إنّ القائم إذا خرج یکون علیه قمیص یوسف...»: کمال الدین ص 143، تفسیر نور الثقلین ج 2 ص 464.
2- الإمام الصادق(علیه السلام): «إنّ إبراهیم لمّا أُوقدت النار ، أتاه جبرئیل بثوب من ثیاب الجنّه فألبسه إیّاه ، فلم یضرّه معه حرّ ولا برد»: بصائر الدرجات ص 209، الکافی ج 1 ص 232.

ص:73

امام روانہ ہونے کے لیے تیار ہو گئے، میں دیکھ رہا تھا کہ امام کس اسلحہ کو دشمنوں کے ساتھ جنگ کے لئے اپنے ساتھ لے کر جاتے ہیں۔

امام کے پاس اسلحہ کی بجائے ایک چھڑی ہے!

میں اپنے آپ سے کہتا ہوں کہ اس فوج کے کمانڈر نے اپنے ساتھ اس لکڑی کی چھڑی کو کیوں رکھا ہے؟

آخر آج کی جنگ تو توپ ٹینک جہاز اور میزائل کی ہے جتنا بھی سوچتا ہوں جواب نہیں ملتا اسی لیے امام کے ایک صحابی سے پوچھتا ہوں امام نے اسلحہ کی جگہ اس چھڑی کو کیوں اٹھا رکھا ہے؟

وہ مجھے جواب دیتا ہے کہ امام کے ہاتھ میں جو چھڑی ہے یہ وہی حضرت موسیٰ علیہ السلام کا عصا ہے۔(1)

باوجود کہ یہ چھڑی ہزاروں سال قبل ایک درخت سے توڑی گئی تھی لیکن ابھی تک تر و تازہ ہے جیسا کہ ابھی درخت سے کاٹی گئی ہو۔(2)

حضرت موسیٰ علیہ السلام کے زمانہ میں لوگ جادو میں زیادہ مہارت رکھتے تھے ۔


1- الإمام الصادق(علیه السلام): «وکلّ نبیّ ورث علماً أو غیره ، فقد انتهی إلی محمّد وآله»: علل الشرائع ج1 ص 53، کمال الدین ص 142.
2- «وإنّ القائم إذا خرج یکون علیه قمیص یوسف ومعه عصا موسی»: کمال الدین ص 143، الغیبه للطوسی ص 266، بحار الأنوار ج 52 ص 12.

ص:74

آج کی اصطلاح میں وہ سحرو جادوگری کا دور تھا۔ لیکن جب حضرت موسیٰ علیہ السلام نے اپنی چھڑی کو پھینکا تو وہ ایک اژدھا بن گئی اور ان کے تمام سانپوں کو نگل لیا۔

آج انسان جتنی مرضی ترقی کرےامام زمانہ علیه السلام اسی چھڑی سے دشمن کا مقابلہ کریں گے۔

یہ عصا بھی تعجب خیز ہے امام اس کے ساتھ جو حکم دیں گے وہ انجام پائے گا۔

ابھی پتہ چلا کہ یہ عصا جو امام کے پاس ہے یہ امام کے ساتھ باتیں بھی کرتی ہے۔(1)

جی ہاں! اب تک انسان نے جو کچھ بنایا ہے ٹینک، توپ، جہاز، میزائل کافی ہے کہ امام اس کو حکم دے اور ان تمام چیزوں کو کنٹرول کرلے۔ (2)

قرآن نے حضرت موسیٰ علیہ السلام کے عصا کے بارے میں بات کی ہے کہ اس عصاپر جادو و سحر کا کوئی اثر نہ ہوتا تھا۔ اس نکتہ کو تو قبول کرتے


1- الإمام الباقر(علیه السلام): «وتصنع ما تؤمر»: الاختصاص ص 270، بحار الأنوار ج 26 ص 219.
2- الإمام الباقر(علیه السلام): «وإنّها لتنطق إذا استنطقت...»: الکافی ج 1 ص 231، الاختصاص ص 270، بحار الأنوار ج 26 ص 219.

ص:75

ہیں کہ قرآن جو بات کہتا ہے وہ ذہن سے دور نہ ہو گی پس اس عصا سےبھی ٹینک، توپ، میزائل اور جہاز کو کنٹرول کیا جا سکتا ہے۔

اس زمانہ میں ہنر جادو تھا آج جو کچھ بھی ہے خدا کے حکم سے اس کا مقابلہ کیا جا سکتا ہے۔

کیا جانتے ہیں کہ جب امام اس عصا کو زمین پر پھینکیں گے وہ عصا کس چیز میں تبدیل ہو جائے گی؟

میں نہیں جانتا کہ کس لفظ کا استعمال کروں؟

کیا کہہ سکتا ہوں کہ وہ کس پڑے اژدھا میں تبدیل ہو جائے گی؟

ڈرتا ہوں کہ کہیں یہ نہ کہہ دیں مصنف نے بھی کیا عجیب و غریب باتیں شروع کرد ی ہیں ۔ میں واقعتا نہیں جانتا کہ کیا کہوں؟

حضرت امام محمد باقر علیہ السلام کے زبان سے بڑھ کر کوئی چیز نہیں ہو سکتی۔

آپ تو ان کی بات کو قبول کرتے ہیں آپ نے فرمایا: " جب ہمارے قائم اس عصا کو زمین پہ ماریں گے وہ زمین کو چیر دے گی اور بہت بڑا گڑھا

ص:76

جس کا فاصلہ زمین و آسمان تک ہو گا نمودار ہو گا جو کوئی اس کے مقابلہ میں ہو گا اس میں گر جائے گا۔(1)

یقینا خدا کس حکمت کے ساتھ اس عصا کے ساتھ حضرت موسیٰ علیہ السلام اور پھر اپنے آخری ولی کی مدد کرے گا۔(2)


1- (وَأَوْحَیْنَآ إِلَی مُوسَی أَنْ أَلْقِ عَصَاکَ فَإِذَا هِیَ تَلْقَفُ مَا یَأْفِکُونَ): (الأعراف، 117).
2- الإمام الباقر(علیه السلام): «. . . یفتح له شعبتان، أحداهما فی الأرض والأُخری فی السقف . . . تلقف مایأفکون بلسانها . . .» : بصائر الدرجات ص 203، الإمامه والتبصره ص 116، بحار الأنوار ج 52 ص 318.

ص:77

ص:78

ہزاروں فرشتوں کا مدد کے لیے آنا

دیکھو! اصحاب امام کس نظم و ضبط کے ساتھ کھڑے ہیں اور منتظر ہیں کہ انہیں روانگی کا حکم دیا جائے اس جوان کو دیکھ رہے ہیں کہ جو لشکر سے آگے نورانی پرچم کو اٹھائے کھڑا ہے؟

کیا اسے جانتے ہیں؟

وہ شعیب بن صالح اس عظیم لشکر کےعلمدار ہیں۔(1)

ان کے ہاتھ میں جو یہ پرچم ہے کیا اس پرچم کو پہچانتے ہو؟ یہ وہی پرچم ہے جسے حضرت پیغمبر اکرم صلی الله علیه و آله و سلم جنگ بدر میں لائے تھے۔(2)

کیا جانتے ہو کہ یہ پرچم صرف دو مرتبہ استعمال ہوا ہے؟

پہلی مرتبہ جب جبرائیل علیہ السلام اس پرچم کو حضرت پیغمبر اکرم صلی الله علیه و آله و سلم کے لیے لائے اور انہوں نے جنگ بدر میں اس کو کھولا اور لشکر اسلام کو کامیابی نصیب ہوئی۔


1- الإمام الباقر(علیه السلام): «... أُعدّت لقائمنا، یصنع بها ما کان یصنع موسی...»: بصائر الدرجات ص 203، الإمامه والتبصره ص 116، بحار الأنوار ج 52 ص 318.
2- «ثمّ یخرج المهدی علی لوائه شعیب بن صالح»: الغیبه للطوسی ص 463، الملاحم والفتن ص 12.

ص:79

حضرت پیغمبر اکرم صلی الله علیه و آله و سلم کے اس پرچم کو سمیٹ کر رکھ دیا اور کسی بھی جنگ میں نہ کھولا اور پھر حضرت امام علیؓ کے حوالہ کر دیا انہوں نے بھی اس پرچم کو صرف جنگ جمل میں کھولا اور پھر کبھی استعمال نہ کیا۔(1)

کیا جانتے ہیں کہ یہ پرچم دنیاوی، روئی، پٹ سن اور حریر کا بنا نہیں بلکہ یہ پرچم بہشتی گھاس کا بنا ہوا ہے۔(2)

یہ پرچم اس قدر نورانی ہے کہ مشرق و مغرب کوروشن کر سکتا ہے۔ (3)

جب یہ پرچم کھولا جائے گا دشمن اس سے خوف و ہراس کھائیں گے اور کوئی اقدام نہ کر سکیں گے۔(4)

اور دوسری طرف یہ پرچم اصحاب امام کے دلوں میں ایسی شجاعت پیدا کر دے گا کہ ان کے دلوں میں کسی قسم کا خوف ہی نہ رہے گا۔(5)

مزے کی بات تو یہ ہے کہ اس پرچم کی لکڑی بھی جنت سے آئی ہے جب بھی امام اپنے دشمن کو نابود کرنا چاہیں تو کافی ہے کہ صرف اس پرچم کی طرف اشارہ کریں اور وہ حکم خدا سے ہلاک ہو جائیں۔(6)


1- الإمام الصادق(علیه السلام): «وهی رایه رسول الله نزل بها جبرئیل یوم بدر»: الغیبه للنعمانی ص 320، بحار الأنوار ج 19 ص 32.
2- الإمام الصادق(علیه السلام): «لمّا التقی أمیر المؤمنین(علیه السلام) وأهل البصره ، نشر الرایه رایه رسول الله(صلی الله علیه وآله وسلم) ، فزلزلت أقدامهم... فلمّا کان یوم صفّین سألوه نشر الرایه فأبی علیهم ، فتحمّلواعلیه بالحسن والحسین وعمّار بن یاسر، فقال للحسن: یا بنیّ، إنّ للقوم مدّه یبلغونها ،وإنّ هذه الرایه لاینشرها بعدی إلاّ القائم»: الغیبه للنعمانی ص 320، بحار الأنوار ج 32 ص 21.
3- الإمام الباقر(علیه السلام): «ما هی والله قطن ولا کتّان ولا خزّ ولا حریر، قلت: من أیّ شیء؟ قال: منورق الجنّه»: الغیبه للنعمانی ص 320بحار الأنوار ج 19 ص 32.
4- الإمام الصادق(علیه السلام): «إذا نشرها أضاء لها ما بین المشرق والمغرب...»: دلائل الإمامه ص 457، بحار الأنوار ج 52 ص 391.
5- الإمام الباقر(علیه السلام): «یسیر الرعب قدّامها شهراً ووراءها شهراً وعن یمینها شهراً وعن یسارهاشهراً»: بحار الأنوار ج 52 ص 360.
6- الإمام الصادق(علیه السلام): «فإذا هزّها لم یبق مؤمن إلاّ صار قلبه أشدّ من زبر الحدید»: الغیبه للنعمانی ص 322.

ص:80

کیاآپ جانتے ہیں ،کہ جب اس پرچم کو کھولا جائے گا فرشتوں کے سات دستے امام کی مدد کے لیے آئیں گے؟

پہلا دستہ: ان فرشتوں کا جنہوں نے حضرت نوح علیہ السلام کی کشتی میں مدد کی ۔

دوسرا دستہ: وہ فرشتے جو حضرت ابراہیم علیہ السلام کی مدد کے لئے آئے۔

تیسرا دستہ: وہ فرشتے جو حضرت موسیٰ علیہ السلام کے ساتھ تھے جب دریائے نیل حکم خدا سے شق ہوا اور قوم بنی اسرائیل نے عبور کیا۔

چوتھا دستہ: وہ فرشتے جو حضرت عیسیٰ علیہ السلام کے ساتھ آسمان پہ گئے۔

پانچواں دستہ: وہ چار ہزار فرشتے جو ہمیشہ حضرت پیغمبر اکرم صلی الله علیه و آله و سلم کی رکاب میں رہتے تھے۔

چھٹا دستہ: تین سو تیرہ فرشتے جنہوں نے جنگ بدر میں حضرت پیغمبر اکرم صلی الله علیه و آله و سلم کی مدد کی۔

ص:81

ساتواں دستہ: وہ فرشتے کہ جو کربلا میں امام حسین کی مدد کے لیے آئے۔

ان تمام فرشتوں کی تعداد تیرہ ہزار تین سو تیرہ ہے کہ جوامام زمانہ علیه السلام کی مدد کے لیے آئیں گے۔(1)

اگر اس لشکر کے دائیں جانب دیکھیں تو آپ کو جبرائیل علیہ السلام اور بائیں طرف میکائیل علیہ السلام نظر آئیں گے۔(2)

تمام زمینی و آسمانی طاقتیں آپ کے حکم کے انتظار میں ہیں۔

جب امام کا لشکر روانہ ہو گا دشمنوں کے دل میں عجیب خوف و ہراس ہو گا یہی دلیل ہے کہ لشکر ہمیشہ کامیاب ہو گا۔(3)

جی ہاں جو لوگ نور خدا کے ساتھ دشمنی کرنا چاہتے ہیں ان کو عجیب خوف محسوس ہو گا لیکن جو کئی سالوں سے نور خدا کی جستجو میں ہوں گے ان کے دلوں میں محبت پیدا ہو گی وہ اس آسمانی تحریک سے خوف نہ کھائیں گے بلکہ ہر لمحہ خواہش کریں گے کہ حضرت مھدی کی حکومت تشکیل پائے تاکہ حقیقی عدالت کو اپنی آنکھوں سے دیکھیں۔(4)


1- الإمام الباقر(علیه السلام): «... عمودها من عمد عرش الله ورحمته... لا یهوی إلی شیء إلاّ أهلکه»: الغیبه للنعمانی ص 319، بحار الأنوار ج 52 ص 326.
2- الإمام الصادق(علیه السلام): «وهم الذین کانوا مع نوح فی السفینه ، والذین کانوا مع إبراهیم حیث أُلقی فی النار...»: الغیبه للنعمانی ص 323.
3- الإمام الصادق(علیه السلام): «جبرئیل عن یمینه ومیکائیل عن یساره...»: الغیبه للنعمانی ص 320.
4- أمیر المؤمنین(علیه السلام): «یسیر الرعب بین یدیه ، لا یلقاه عدوّ إلاّ هزمهم...»: الملاحم والفتن ص 138، کتاب الفتن للمروزی ص 215.

ص:82

ص:83

ص:84

وہ کہ جو دوبارہ زندہ ہوئے

تمام روانگی کے حکم کا انتظار کر رہے ہیں لشکر کو منظم گروہوں میں تقسیم کر دیا گیا ہے۔

ان کے درمیان ایک سات افراد پر مشتمل گروہ کی طرف متوجہ ہوتا ہوں آگے بڑھ کر ان میں سے ایک سے پوچھتا ہوں۔

ان میں سے ایک نے اپنے آپ کو (تلمیخا) کے نام سے تعارف کرایا ہے۔ (1)

نہیں جانتا کہ آپ اسے پہچانتے ہیں یا نہیں؟

"تلمیخا"اصحاب کہف میں سے ایک کا نام ہے وہی سات افراد جن کا قصہ قرآن میں آیا ہے۔

کیاآپ نےسورہ کہف کو پڑھا ہے؟


1- «ویقذف الله محبّته فی قلوب الناس فیسیر...» : کتاب الفتن ص 217.

ص:85

وہ سات خداپرست انسان جو اپنے زمانہ کے طاغوت ) ظالموں (کے خوف سے غار میں پناہ لیتے ہیں اور تین سو سال سے زیادہ اس غار میں سوئے رہے۔

شاید کہیں کہ جناب مصنف آپ بھی عجیب باتیں کرتے ہیں؟

آپ کے ہوش و حواس کہاں ہیں؟

یہ نہ ہو کہ خیالاتی ہو گئے ہیں؟ اصحاب کہف کو دنیا سے گئے ہزاروں سال ہو گئے ہیں آخر ان کو لشکرامام زمانہ علیه السلام میں کیسے دیکھا جا سکتا ہے؟

میں یہاں یہ فقط ایک جملہ کہوں گا:

کیا آپ نے حضرت امام جعفر صادق علیہ السلام کے فرمان کو نہیں سنا کہ آپ نے فرمایا:

”جب بھی ہمارے قائم قیام کریں گے خداوند اصحاب کہف کو زندہ کرے گا“ (1)

جی ہاں! قائم آل محمد کے لشکر میں بہت سے افراد ایسے ہوں گے جو مرنے کے بعد خدا کے حکم سے زندہ ہو کر امام کی نصرت کریں گے۔


1- اسامی أصحاب الکهف: فرطالوس، امیوس، دانیوس، اسرافیون، اسطاطانوس، مکسامیس، تلمیخا: التحصین ص 655.

ص:86

ایک اور وہاں پر ”مقداد“ ہیں۔

وہ حضرت پیغمبر اکرم صلی الله علیه و آله و سلم اور حضرت علیؓ کے بہترین صحابی ہیں اب حکم خدا سے دوبارہ زندہ ہوتے ہیں۔(1)

ایک اور جابر بن عبداللہ انصاری ہیں وہ بھی حضرت پیغمبر اکرم صلی الله علیه و آله و سلم کے قریبی ترین صحابی اور حضرت امام محمد باقر علیه السلام کے زمانہ تک زندہ رہے ہیں۔

وہی کہ جو روز ”اربعین“ کربلا آئے دریائے فرات پہ غسل کیا اور شہدائے کربلا کی قبور کی زیارت کی وہ اب زندہ ہیں تاکہ شہدائے کربلا کا انتقام لیں ۔(2)

میں کچھ ایسے لوگوں کو بھی دیکھ رہا ہوں کہ جو عالم برزخ میں تھے اور جب امام زمان نے ظہور کیا فرشتہ ان کے پاس آیا اور اطلاع دی زمانہ ظہور آ گیا ہے اٹھو اور اپنے امام کی مدد کے لیے دوڑو۔(3)


1- الإمام الصادق(علیه السلام): «إذا ظهر القائم بعث الله معه... وأصحاب الکهف»: دلائل الإمامه ص 463.
2- الإمام الصادق(علیه السلام): «إذا ظهر القائم، بعث الله معه... والمقداد»: نفس المصدر ص 463.
3- الإمام الصادق(علیه السلام): «إذا ظهر القائم، بعث الله معه... وجابر بن عبد الله الأنصاری»: نفس المصدر ص 463.

ص:87

ص:88

لشکرامام زمانہ علیه السلامکا نعرہ؟

امام زمانہ علیه السلام نے اپنے لشکر کا پروگرام طے کر رکھا ہے ان کا پہلا مقصد شہر مدینہ کو ظالموں کےقبضہ سےنجات دلانا ہے۔

ٹھیک ہے کہ لشکر سفیانی کے تین لاکھ سپاہی بیابان ”بیدا“ میں غرق ہو گئے ہیں لیکن ابھی تک سفیانی کے طرفدار مدینہ میں باقی ہیں اور اس شہر میں قبضہ جمائے ہوئے ہیں۔

غور کرو! کیا اس آواز کو سن رہے ہو؟

کوئی بھی اپنے ساتھ کھانے پینے کی کوئی چیز نہ اٹھائے۔(1)

یہ امام کا حکم ہے کہ جو لشکر کو سنایا جاتا ہے۔

یہ دنیا کا واحد لشکر ہے جسے راشن کی ضرورت نہیں ہے!

کیا ایسا ممکن ہے کہ دس ہزار سے زائد کا لشکر سعودی عرب کی اس گرمی میں اپنے ساتھ کھانے پینے کا سامان نہ رکھے۔

امام اپنے لشکر کی پیاس کے لیے کیا انتظام کیے ہوئے ہیں؟


1- الإمام الصادق(علیه السلام): «المؤمن مخیّر فی قبره ، فإذا قام القائم فیُقال له: قد قام صاحبک فإن أحببت أن تلحق به فالحق...»: نفس المصدر ص 479. عن الإمام الصادق(علیه السلام): «فکأنّی أنظر إلیهم مقبلین... ینفضون شعورهم من التراب»: الإرشاد ج 2 ص 381، بحار الأنوار ج 52 ص 337، کشف الغمّه ج 3 ص 262.

ص:89

کیا ہوجاتااگر کوئی اپنے ساتھ کچھ کھانے پینے کی چیزیں اٹھا لے؟

اے میرے دوست! کیا میرے ساتھ اس لشکر کے ہمراہ جانا چاہتے ہیں؟

آپ تو جانتے ہیں کہ ہمیں بھی اس حکم پر عمل کرنا ہو گا اور اپنے ساتھ کھانے پینے کی کوئی چیز نہ لینا ہو گی۔

ظاہر ہےآپ بھی اس سفر میں جانا چاہتے ہیں؟ لیکن وعدہ کریں کہ جب آپ کو پیاس لگے گی تو مجھ سے پانی نہ مانگیں گے۔

حق کا بڑا لشکر روانگی کے لیے تیار ہے۔

ہر لشکر کا کوئی نہ کوئی نعرہ ضرور ہوتا ہے آپ کی نظر میں اس لشکر کا کیا نعرہ ہو گا؟

سنو! یہ سارا لشکر ایک ہی آواز لگا رہاہے: یا لثا رات الحسین اے خونخواہان حسین۔(1)

امام جانتے ہیں کہ صدیوں سے شیعہ امام حسین علیہ السلام پر آنسو بہا رہے ہیں ۔


1- الإمام الباقر(علیه السلام): «إنّ القائم إذا قام بمکّه... نادی منادیه: ألا، لایحمل أحد منکم طعاماًولا شراباً»: بصائر الدرجات ص 208، الکافی ج 1 ص 231، کمال الدین ص 670، الغیبه للنعمانی ص 244.

ص:90

جی ہاں! یہ نام امام حسین علیہ السلام ہے کہ جو دلوں کو منقلب کر دیتا ہے۔

میں سوچ میں پڑ گیا کہ اس لشکر نے اپنا نعرہ امام حسین علیہ السلام کی خونخواہی کیوں رکھا ہے جبکہ ہزار سال سے زائد عرصہ گزر گیا ہے یزید اور اس کے فوجی بھی مر گئے ہیں ؟

یہ خدا کا ایک قانون ہے کہ اگر کسی مظلوم کا خون دنیائے مشرق میں گرے اور جو مغرب میں ہو وہ اس سے راضی ہو تو وہ بھی اس جرم میں شریک شمار ہو گا۔(1)

اگرچہ یزید اور یزیدی مر گئے ہیں لیکن آج بھی بہت سے گروہ ہیں کہ جو یزیدی کاموں پہ افتخار کرتے ہیں!

سفیانی اور اس کے سپاہی یزید کے راستہ پر گامزن ہیں اگر یزید نے امام حسین علیہ السلام کو قتل کیا ہے آج سفیانی جو شہر کوفہ میں ہے، جو کوئی بھی امام حسین کا نام لیتا ہے اسے شہید کر دیتا ہے۔(2)


1- الإمام الصادق(علیه السلام): «شعارهم یا لثارات الحسین»: بحار الأنوار ج 52 ص 308، مستدرک الوسائل ج 11 ص 114.
2- الإمام الرضا(علیه السلام): «ذراری قتله الحسین یرضون أفعال آبائهم ویفتخرون بها ، ومن رضی شیئاً کان کمن أتاه ، ولو أنّ رجلاً قُتل فی المشرق فرضی بقتله رجل فی المغرب ، لکان الراضی عند الله شریک القاتل...»: علل الشرائع ج 1 ص 229، عیون اخبار الرضا ج 2 ص 247، بحار الأنوار ج 45 ص 295، ج 52 ص 313.

ص:91

ص:92

زخمیوں کی طبی امداد

عورتوں کا ایک گروہ عفت وحیاکے کمال کے ساتھامام زمانہ علیه السلام کے لشکر کے ساتھ ہے۔ آپ سوال کریں گے کہ یہ لشکر جنگ کے لیے جا رہا ہے

پس یہ عورتیں کیوں جا رہی ہیں؟

کیا آپ نے سنا ہے کہ جب بھی حضرت پیغمبر اکرم صلی الله علیه و آله و سلم جنگ کے لیے جاتے ،کچھ عورتیں بھی آپ کے ساتھ ہوتیں کہ جو زخمیوں کی مرہم پٹی کرنے کےلئے ساتھ جاتی تھیں؟اب امام بھی سیرت ح حضرت پیغمبر اکرم صلی الله علیه و آله و سلم پر چلنا چاہتے ہیں کچھ عورتوں کو زخمیوں کی مرہم پٹی کے لیے ساتھ لے کر جا رہے ہیں۔

حضرت امام جعفر صادق علیہ السلام نے اطلاع دی ہے کہ اس لشکر میں حضرت سمیہ بھی ہیں وہی جو حضرت عمار یاسر کی ماں ہیں اور اسلام کی پہلی شہید عورت۔(1)


1- الإمام الباقر(علیه السلام): «یبعث السفیانی جیشاً إلی الکوفه وعدتهم سبعون ألفاً ، فیصیبون من أهل الکوفه قتلاً وصلباً وسبیاً...»: الغیبه للنعمانی ص 289، الاختصاص للمفید ص 256، بحار الأنوار ج 52 ص 238، تفسیر العیّاشی ج 1 ص 245، تفسیر نور الثقلین ج 1 ص 486.

ص:93

وہ شیردل عورت تھیں جو ابو جہل کے ظلم و ستم کی وجہ سے شہید ہوئیں ;لیکن اپنے عقیدہ وایمان سے دستبردار نہ ہوئیں۔(1)

اب خدا انہیں اس استقامت کا اجر دے رہا ہے اس لیے انہیں زندہ کیا ہے تاکہ اسلام کی عزت کو دیکھ سکیں۔

ان عورتوں میں ایک ”اُم ایمن“ بھی ہیں کیا انہیں جانتے ہیں؟

اُم ایمن جنگ احد، حنین اور خیبر میں لشکر اسلام کے ساتھ تھیں اور زخمیوں کا علاج کرتی تھیں۔

اب وہ بھی خدا کے حکم سے زندہ ہوتی ہیں تاکہ فرزند حضرت پیغمبر اکرم صلی الله علیه و آله و سلم کے لشکر کے سپاہیوں کی مرہم پٹی کر سکیں۔


1- الإمام الصادق(علیه السلام): «مع القائم ثلاث عشره امرأه، قلت: وما یصنع بهنّ، قال: یداوین الجرحی، قلت: سمّهنّ لی، فقال:... وسمیّه أُمّ عمّار بن یاسر»: دلائل الإمامه ص 484. «أوّل شهید استشهد فی الإسلام سمیّه أُمّ عمّار»: الاستیعاب ج 4 ص 1864، الطبقات الکبری ج 8 ص 264، البدایه والنهایه ج 3 ص 76.

ص:94

ص:95

اس بڑے پتھر کو لائو

امام اپنے ایک صحابی کو مکہ کا گورنر بنا کر اپنا جانشین مقرر کرتے ہیں اور مدینہ روانگی کا حکم صادر کرتے ہیں۔(1)

لشکر امام مدینہ کی طرف گامزن ہے۔

موسم بہت گرم ہے آہستہ آہستہ ہر ایک پر پیاس کا غلبہ ہو رہا ہے ۔

میں بھی بہت پیاسا ہوں یہ سوچ رہا تھا کہ اس صحرا میں پانی کہاں سے تلاش کروں۔ کیا آپ بھی پیاسے ہیں؟

امام بھی اپنے ساتھیوں کی بھوک و پیاس کو دیکھتے ہیں حکم دیتے ہیں کہ لشکر کو اس جگہ روک دیا جائے۔

یہ بیایان جگہ ہے ہر طرف ریت ہی ریت نہ کوئی درخت نہ کوئی سایہ اور اوپر سے صحرا کی گرمی

اِدھر کیا ہو رہا ہے؟ کیوں تمام نظریں ادھر لگی ہیں؟

امام نے حکم دیا ہے کہ اس بڑے پتھر کو لایا جائے۔


1- حضرت أُمّ أیمن أُحداً وحنیناً وخیبراً... تداوی الجرحی... اسمها برکه بنت ثعلبه: الإصابه ج 8 ص 361، الطبقات الکبری ج 8 ص 225، أعیان الشیعه ج 3 ص 555.

ص:96

یہ پتھر کہاں تھا؟

گویا جب سےمکہ سے روانہ ہوئے ہیں یہ پتھر بھی اس لشکر کے ساتھ ہے۔

اب امام اپنی عصا اس پتھر پر مارتے ہیں اچانک سب پکارتے ہیں پانی! پانی!

کتنا ٹھنڈا اور میٹھا پانی اس پتھر سے جاری ہو جاتا ہے! اس پتھر اور عصا کا کیا ماجرا ہے؟

اصل ماجرا زمانہ حضرت موسیٰ علیہ السلام میں لوٹ جاتا ہے ،جب حضرت موسیٰ علیہ السلام کی قوم کسی بیابان میں پیاس میں گرفتار ہو گئی، نزدیک تھا کہ سب پیاس سے ہلاک ہو جائیں، پس حضرت موسیٰ علیہ السلام نے اپنی عصاکو ایک پتھر پر مارا وہاں سے بارہ چشمے جاری ہوئے۔

پوری قوم بنی اسرائیل جس کی تعداد چھ لاکھ افراد سے زیادہ تھی اس پانی سے سیراب ہوئے اب وہی پتھرامام زمانہ علیه السلام کے سامنے ہے۔(1)

حضرت موسیٰ علیہ السلام کایہ پتھرامام زمانہ علیه السلام کو وراثت میں ملا ہے، جی ہاں آپ تمام انبیاءکے وارث ہیں۔(2)


1- الإمام الصادق(علیه السلام): «یستخلف منها رجلاً من أهله...»: بحار الأنوار ج 53 ص 11.
2- «تسیل کلّ عین فی جدول إلی سبط کانوا ستمئه ألف»: تفسیر البیضاوی ج 1 ص 329، مجمع البحرین ج 1 ص 462.

ص:97

پانی جو اس پتھر سے جاری ہوتا ہے پیاس کو بھی مٹاتا ہے اور بھوک کا خاتمہ بھی کرتا ہے۔(1)


1- الإمام الباقر(علیه السلام): «ویحمل حجر موسی بن عمران وهو وقر بعیر ، فلا ینزل منزلاً إلاّ انبعث عین منه...»: بصائر الدرجات ص 208، الکافی ج 1 ص 231، کمال الدین ص 670، الغیبه للنعمانی ص 244.

ص:98

لشکرامام کا مکہ واپس لوٹنا

ابھی ہم مکہ سے زیادہ دور نہیں گئے تھے کہ ایک ناخوشگوار خبر ملی۔

امام کو یہ اطلاع دی گئی کہ مکہ کے لوگوں نے بغاوت کر دی ہے اور مکہ کے گورنر کو قتل کر دیا ہے۔(1)

اب امام حکم دیتے ہیں کہ لشکر کو واپس مکہ پہنچایا جائے۔

مکہ کے لوگوں کو اطلاع ملتی ہے وہ جانتے ہیں کہ اس لشکر کا مقابلہ نہیں کر سکتے اس بنا پر گریہ) روتے ہوئے ( کرتے ہوئے، امام کی خدمت میں حاضر ہوکر کہتے ہیں:'' اے مھدی آل محمد، ہماری توبہ قبول کر لیں" (2)

آپ کیا سمجھتے ہیں امام ان کی توبہ قبول کر لیں گے؟

جی ہاں! آپ صحیح سمجھے ،جی ہاں وہ اسی کے بیٹے ہیں کہ جب ان کی نظر ابن ملجم پر پڑی اپنے بیٹے امام حسن علیہ السلام سے فرمایا: میرے بیٹے اس


1- الإمام الباقر(علیه السلام): «من کان جائعاً شبع ، ومن کان ظمآناً روی»: الغیبه للنعمانی ص 244، بحار الأنوار ج 13 ص 185، ج 52 ص 324.
2- الإمام الصادق(علیه السلام): «فإذا سار منها وثبوا علیه فیقتلونه»: بحار الأنوار ج 53 ص 11.

ص:99

کے ساتھ مہربانی سے پیش آﺅ اس کے ساتھ نیکی کرو ایسا نہ ہو کہ وہ بھوکا پیاسا رہے۔(1)

حضرت امام علی علیہ السلام کو جب سر میں ضرب لگ چکی تو آپ اپنے بچوں کو قاتل کے ساتھ ایسا سلوک کرنے کی نصیحت کر رہے ہیں!

امام زمانہ علیه السلام بھی حضرت امام علی علیہ السلام کے بیٹے ہیں ۔وہ تمام مکہ کے لوگوں کو معاف کرتے ہیں!

سچ ہے، ایسی کونسی حکومت ہے جو اتنی محبت والفت سے پیش آتی ہے؟

کیا آج تک آپ نے سنا ہے کہ کسی شہر کے لوگوں نے بغاوت کی ہو گورنر کو قتل کیا ہو ؛ لیکن حکومت نے انہیں معاف کر دیا ہو؟

وہ لوگ جو لوگوں کوامام زمانہ علیه السلام کے ظہور سے ڈراتے ہیں نادانستہ طور پہ دشمن کے کھیت کو سیراب کرتے ہیں۔

نادانستہ طور پر ،ہم یہ عمل کیوں کریں؟


1- الإمام الصادق(علیه السلام): «فیأتونه مهطعین مقنعی رؤوسهم ، یبکون ویتضرّعون ویقولون: یامهدی آل محمّد، التوبه التوبه»: بحار الأنوار ج 53 ص 11.

ص:100

کیوں نہ ہم لوگوں میں امام کے شوق دیدار میں اضافہ کریں، تاکہ وہ ظہور کا انتظار کریں ، اگر ہم لوگوں کو امام سے ڈرائیں گے تو یہ وہی چیز ہے کہ جو مکتب تشیع کے دشمن چاہتے ہیں۔

ہمارےامام زمانہ علیه السلام خدا کی رحمت و لطف کے مظہر ہیں۔ وہ آئیں گے تاکہ دنیا میں بھائی چارے میں اضافہ ہو۔(1)

بہر حال امام ،مکہ کے تمام لوگوں کو معاف کر تےہیں؛ ایک اور شخص کو گورنر مقرر کرنے کے بعد پھر مدینہ کی جانب روانہ ہوتے ہیں۔(2)

ابھی مکہ سے کچھ ہی دور ہوئے تھے کہ خبر ملی :لوگوں نے ایک مرتبہ پھر بغاوت کردی ہے اور نئے گورنر کو بھی قتل کر دیا ہے۔

امام اس مرتبہ فیصلہ کرتے ہیں کہ شہر مکہ کو ظالموں کے وجود سے پاک کیا جائے، آپ اپنے چند ساتھیوں کو مکہ بھیجتے ہیں تاکہ اس شہر میں امن و امان قائم کریں۔(3)


1- «اطعمه یا بنی ممّا تأکله... ارفق یا ولدی بأسیرک وارحمه ، وأحسن إلیه وأشفق علیه»: بحار الأنوار ج 42 ص 287، مستدرک الوسائل ج 11 ص 79.
2- الإمام الصادق(علیه السلام): «... أخرج منه الداعی إلی سبیلی والخازن لعلمی الحسن ، وأکمل ذلک بابنه (م ح م د) رحمهً للعالمین...»: الکافی ج 1 ص 528، کمال الدین ص 31.
3- الإمام الصادق(علیه السلام): «فیعظهم وینذرهم ویستخلف علیهم خلیفه ویسیر»: بحار الأنوار ج 53 ص 11.

ص:101

ص:102

مہتاب کے دشمنوں سے انتقام

امام زمانہ کا لشکر شہر حضرت پیغمبر اکرم صلی الله علیه و آله و سلم کے نزدیک ہو رہا ہے۔

اگرچہ سفیانی کے لشکر کی ایک بہت بڑی تعداد بیابان ”بیدا“ میں غرق ہو چکی ہے لیکن ابھی تک مدینہ پر اس کا کنٹرول ہے۔

انہوں نے شہر مدینہ میں بہت زیادہ ظلم و ستم کیے ہیں مسجد نبوی اور حرم رسول کو ویران کر دیا ہے۔

لشکر امام شہر مدینہ میں داخل ہوتا ہے اور اس شہرپر امام کاکنٹرول ہوجاتا ہے۔ امام مسجد نبوی میں داخل ہوتے ہیں اور اس کی تعمیر کا حکم دیتے ہیں۔

جی ہاں! یہ مدینہ شہر ہے غم و اندو کا شہر!

یہ مدینہ ہی تھا کہ جب لوگوں نے خانہ وحی کو آگ لگائی ،ابھی بھی اس شہر سے حضرت فاطمہ سلام اللہ علیہا کے رونے کی آوازیں سنائی دیتی ہیں، قدم قدم پر مظلومیت زہراءکے نشان باقی ہیں۔

ص:103

امام اپنی مظلوم ماں کا انتقام لینا چاہتے ہیں اگر کل خانہ زہراءکو آگ لگائی گئی ،آج خدا کے حکم سے انہیں زندہ کیا جائے گا تاکہ انہیں کیفرکردار تک پہنچایا جا سکے۔(1)

یہاں پر ہر شیعہ کا دل خوشی سے مسرور ہو جاتا ہے۔

امام شہر مدینہ کے بعد کوفہ کی جانب روانہ ہوتے ہیں چونکہ خدا نے حکومت مھدی کا دارالخلافہ کوفہ کو قرار دیا ہے۔


1- الإمام الصادق(علیه السلام): «فیثبون علیه بعده فیقتلونه فیرد إلیهم...»: بحار الأنوار ج 53 ص 11.

ص:104

کوفہ کی جانب

کیا آپ نےسید حسنی کا نام سنا ہے؟

وہ امام حسن علیہ السلام کے بیٹوں میں سے ہیں کہ جو خراساں میں قیام کریں گے اور لوگوں کوامام زمانہ علیه السلام کی طرف دعوت دیں گے۔

سید حسنی نے سنا ہے کہ کوفہ سفیانی کے کنٹرول میں ہے اس لیے اپنی فوج کوکوفہ کی جانب روانہ کرتے ہیں تاکہ سفیانی کو شکست دے کر کوفہ کو آزاد کرائیں۔

انہوں نے سیاہ رنگ کے پرچم کو اپنے لیے منتخب کیا ہے اور بارہ ہزار سپاہیوں کے ساتھ کوفہ کی جانب پیش قدمی کرتے ہیں۔(1)

جب سفیانی کو اس کی اطلاع ملتی ہے وہ کوفہ کو چھوڑ دیتا ہے اور یہ شہر سید حسنی کے ہاتھوں فتح ہو جاتا ہے۔(2)

سفیانی کا کوفہ سے فرار ایک جنگی تکنیک ہے؛ کیونکہ اس کی اصلی جنگ امام زمانہ علیه السلام کے ساتھ ہے ،اسی لیے وہ اپنی قوت کو محفوظ رکھنا چاہتا ہے۔


1- الإمام الباقر(علیه السلام): «ثمّ یدخل المسجد فینقص الحائط حتّی یضعه إلی الأرض... وذلک الحطب عندنا نتوارثه»: دلائل الإمامه ص 455.
2- الإمام الباقر(علیه السلام): «یخرج شاب من بنی هاشم... یأتی من خراسان...»: الملاحم والفتن ص 120. عن الإمام الصادق(علیه السلام): «..یخرج الحسنی... یصیح بصوت له فصیح: یا آل أحمد أجیبواالملهوف»: بحار الأنوار ج 53 ص 15، مکیال المکارم ج 1 ص 77. عن رسول الله(صلی الله علیه وآله وسلم): «حتّی یبعث الله رایه من المشرق سوداء... حتّی یأتوا رجلاً اسمه اسمی»: الملاحم والفتن ص 121، کتاب الفتن للمروزی ص 189. علیّ(علیه السلام): «فیلحقه رجل من أولاد الحسن(علیه السلام) فی اثنی عشر ألف فارس...»: معجم أحادیث الإمام المهدی(علیه السلام) ج 3 ص 97.

ص:105

ابھی کوفہ نہیں پہنچے کہ خبر ملتی ہے کہ کوفہ کو سید حسنی نے فتح کر لیا ہے۔

اب لشکر حق آسانی سے اس شہر میں داخل ہو سکتا ہے۔

میرا بڑا دل چاہتا ہے کہ مسجد کوفہ کو دیکھوں میں لمحات گن رہا ہوں کہ جتنا جلدی ہو سکے کوفہ میں داخل ہوں؛ لیکن لشکر رک جاتا ہے۔

اب کیا ہو گیا ہے؟

امام حکم دیتے ہیں کہ لشکر کو کوفہ سے باہر ہی روک دیا جائے۔

اس طرف دیکھیں!

سید حسنی اپنے ساتھیوں کے ہمراہ ہماری طرف بڑھ رہے ہیں۔وہ امام کی خدمت میں حاضر ہوتے ہیں عرض ادب و سلام کرتے ہیں۔ وہ اپنے امام پہ محکم اعتقاد رکھتے ہیں؛ لیکن اپنے ساتھیوں کے یقین کو بڑھانے کی خاطر امام کو اس طرح مخاطب کرتے ہیں: " اگر آپ مھدی آل محمد ہیں اپنی امامت کی نشانیاں دکھائیں'' (1)

شاید آپ کہیں کہ امامت کی نشانی کیا ہے؟


1- «ولم یزل یقتل الظلمه حتّی یرد الکوفه...»: بحار الأنوار ج 53 ص 15.

ص:106

سید حسنی کی مراد عصاء موسیٰ علیہ السلام اور حضرت پیغمبر اکرم صلی الله علیه و آله و سلم کا عمامہ اور انگوٹھی ہےامام زمانہ علیه السلام سید حسنی جس چیز کا تقاضا کرتے ہیں دکھاتے ہیں۔

سید حسنی اللہ اکبر، اللہ اکبر کی آوازیں بلند کرتے ہیں۔

سب دیکھتے ہیں اور وہ امام کی پیشانی کا بوسہ لیتے ہیں۔(1)

بعد میں سید حسنی کہتے ہیں:'' اے فرزند رسول خدا آپ کی بیعت کرنا چاہتا ہوں'' (2)

سید حسنی امام کے ساتھ بیعت کرتے ہیں اور عہد و پیمان کرتے ہیں۔ جب اس کے ساتھی یہ منظر دیکھتے ہیں وہ بھی امام کی بیعت کرتے ہیں۔

اب وقت آن پہنچا ہے کہ امام شہر کوفہ میں داخل ہوں امام اپنے اصحاب کے ساتھ مسجد کوفہ میں مستقر ہوتے ہیں اس مسجد میں جگہ جگہ خیمہ نصب کرتے ہیں۔(3)

آج پہلی رات تھی جب لشکر امام مسجد کوفہ میں آیا تھا وہ صبح تک اپنے خدائے مہربان کے ساتھ راز و مناجات میں رہے۔


1- الإمام الصادق(علیه السلام): «... فیخرج الحسنی فیقول: إن کنت مهدی آل محمّد فأین هراوه جدّک رسول الله(صلی الله علیه وآله وسلم)وخاتمه وبردته...»: بحار الأنوار ج 53 ص 15.
2- الإمام الصادق(علیه السلام): «... فیقول: جعلنی الله فداک، إعطنی رأسک أقبّله ، فیعطیه رأسه فیقبّله بین عینیه...»: تفسیرالعیّاشی ج 2 ص 59.
3- الإمام الصادق(علیه السلام): «... فیقول الحسنی: الله أکبر، مدّ یدک یابن رسول الله حتّی نبایعک»: بحار الأنوار ج 53 ص 15.

ص:107

کیا جانتے ہیں اس مسجد میں ایک مستحب نماز پڑھنے کا ثواب ایک عمرہ کے برابر ہے۔(1)

چند روز گزر جاتے ہیں۔۔۔

پتہ چلتا ہے کہ امام اپنے کچھ اصحاب کے ساتھ کوفہ کے اطراف کے بیابانوں میں جاتے ہیں پس ہم بھی ان کے ساتھ جاتے ہیں تاکہ دیکھیں کیا ہوتا ہے کچھ دیر چلنے کے بعد امام بیابان کے وسط میں رکتے ہیں اپنے اصحاب کو گڑھا کھودنے کا حکم دیتے ہیں۔

تھوڑی دیر کے بعد پتہ چلتا ہے کہ زمین کے اندر سے اسلحہ ملتا ہے!

جی ہاں یہ وہ اسلحہ ہے کہ جو خدا نےامام زمانہ علیه السلام کے لیے تیار کیا ہے۔ (2)

امام اپنے ساتھیوں کو حکم دیتے ہیں کہ اس اسلحہ کو شہر کوفہ میں لے جائیں اور اپنے سپاہیوں میں تقسیم کر دیں۔ اصحاب امام اس اسلحہ کو لے کر کوفہ لوٹ آتے ہیں۔


1- الصادق: «ضرب القائم الفساطیط فی مسجد کوفان...»: الغیبه للنعمانی ص 334.
2- الإمام الصادق(علیه السلام): «فإنّ الصلاه المکتوبه فیه حجّه مبروره ، والنافله عمره مبروره»: الکافی ج 3 ص 491، وسائل الشیعه ج 5 ص 261، الغارات ج 2 ص 802، فضل الکوفه ومساجدها ص 29. عن الإمام الباقر(علیه السلام): «فقال لأصحابه: تعبّدوا لیلتکم هذه ، فیبیتون بین راکع وساجد...»: تفسیر العیّاشی ج 2 ص 59.

ص:108

ص:109

سفیانی کاتوبہ کرنا

اس مدت کے دوران جب امام کوفہ میں تھے ستر ہزار لوگ امام مھدی کے لشکر سے آ ملے ہیں۔ (1)

امام کا اصل مقصد عدالت اور امن و امان کا قیام کرنا ہے اسی لیے آپ سفیانی سے جنگ کے لیے جاتے ہیں یہ خبر سفیانی کو بھی ملتی ہے۔

سفیانی سوچ میں پڑ جاتا ہے اسے تین لاکھ کے لشکر کی یاد آتی ہے کہ بیابان ”بیدا“ میں زمین میں دھنس گئے وہ ڈر رہا ہے کہ کہیں خود بھی ایسی ہی سر نوشت کا شکار نہ ہو جائے۔

اب ،سفیانی توبہ کرنے اور اپنی جان بچانے کا فیصلہ کرتا ہے۔

کیا امام اس کی توبہ کوقبول کرلیں گے؟

دیکھو ! یہ سفیانی اپنے لشکر سے جدا ہو کرتنہا امام کی خدمت میں آرہا ہے چونکہ وہ اکیلا آیا ہے اس کے پاس اسلحہ نہیں ہے اصحاب امام اسے ملنے کی اجازت دیتے ہیں۔(2)


1- الإمام الصادق(علیه السلام): «إذا قام القائم أتی رحبه الکوفه فقال برجله هکذا ، وأومأ بیده إلی موضع ، ثمّ قال: احفروا ها هنا ، فیحفرون فیستخرجون اثنی عشر ألف درع واثنی عشر ألف سیف»: الاختصاص ص 334، بحار الأنوار ج 52 ص 377.
2- الإمام الباقر(علیه السلام): «إذا ظهر القائم ودخل الکوفه ، بعث الله تعالی من ظهر الکوفه سبعین ألف صدّیق ، فیکونون فی أصحابه وأنصاره...»: بحار الأنوار ج 52 ص 390.

ص:110

سفیانی امام کے پاس آ کر بات کرتا ہے۔

میں بے صبری سے انتظار کر رہا ہوں کہ دیکھوں کہ نتیجہ کیا ہوتا ہے،کیا امام اس کو قبول کر لیتے ہیں۔

کوئی بھی بھلا نہیں سکتا کہ سفیانی نے بہت زیادہ قتل وغارت کی ہے اور ہزاروں شیعوں کو شہید کیا ہے۔

کیامیں صحیح دیکھ رہا ہوں؟ یہ سفیانی امام کی بیعت کر رہا ہے!امام نےسفیانی کی توبہ کو قبول کرلیا ہے۔

میری جان آپ پر قربان اے مہربان امام۔

آپ اس قدر مہربان ہیں کہ ہزاروں شیعوں کے قاتل کو بھی بخش دیتے ہیں!

پس کیوں کچھ جھوٹے لوگ ،لوگوں کو آپ کی تلوار سے ڈراتے ہیں؟ کیوں میں ان جھوٹی باتوں کو قبول کرتا رہا ہوں؟ کیوں؟

اب سفیانی امام کی بیعت کرنے کے بعد اپنے لشکر کی طرف واپس آتا ہے۔ جب وہ اپنے لشکر سے ملتا ہے تو اس کے سپاہی کہتے ہیں۔

ص:111

....جناب کمانڈر !آپ کے کام کا انجام کیا ہوا؟

....میں نے ہتھیار ڈال دیے اور امام کی بیعت کر لی ہے۔(1)

....کتنی بڑی غلطی کر ڈالی ہے اور اپنے لیے ذلت کو خرید لیا ہے۔

....تمہاری مراد کیا ہے؟

....آپ اتنے بڑے لشکر کے کمانڈر ہیں ہم سب آپ کے حکم کے تابع ہیں؛

لیکن اب آپ ایک سپاہی سے زیادہ نہیں اب اپنے کمانڈر کی اطاعت کریں۔ (2)

جی ہاں سفیانی کے سپاہی ا س کی کمزوریوں سے آگاہ ہیں اور جانتے ہیں وہ قدرت کا پیاسا ہے وہ اس کے ان جذبات سے کھیلتے ہیں۔

سفیانی تھوڑی دیر کے لیے سوچ میں ڈوب جاتا ہے لیکن سفیانی کے سپاہیوں کی باتیں اپنا اثر دکھا چکی ہیں بالآخر وہ اپنے فیصلہ پر پریشمان ہو جاتا ہے۔


1- الإمام الباقر(علیه السلام): «إذا بلغ السفیانی... یتجرّد بخیله حتّی یلقی القائم...»: بحار الأنوار ج 52 ص 388.
2- الإمام الباقر(علیه السلام): «فیجیء السفیانی فیبایعه ، ثمّ ینصرف إلی أصحابه»: بحار الأنوار ج 52 ص 388.

ص:112

اب وہ امام کے ساتھ اپنی بیعت کو توڑ دیتا ہے اور فیصلہ کرتا ہے کہ شہر کوفہ پر حملہ کر کے امام کے ساتھ جنگ کرے۔(1)


1- الإمام الباقر(علیه السلام): «ثمّ ینصرف إلی أصحابه فیقولون: ما صنعت؟ فیقول: أسلمت وبایعت،فیقولون له: قبّح الله رأیک، بینما أنت خلیفه متبوع فصرت تابعاً»: بحار الأنوار ج 52 ص 388.

ص:113

ایک سخت جنگ کا سامنا

سفیانی بہت مغرور ہو گیا ہے ؛کیونکہ اس کے سپاہیوں کی تعداد امام کے لشکر سے دو گنا زیادہ ہے۔ وہ اصحاب امام کی تعداد سےآگاہ ہے!

....دس ہزار سپاہی مکہ سے امام کے ساتھ آتے ہیں۔

....بارہ ہزار سپاہی سید حسنی کے ساتھ خراساں سے آتے ہیں۔

....ستر ہزار کوفہ سے لوگ امام کے ساتھ ملحق ہوتے ہیں۔

جبکہ سفیانی کی فوج میں ایک لاکھ ستر ہزار سپاہی موجود ہیں اسے قطعی طور پر کامیابی کا یقین ہے اس لیے وہ کوفہ کی جانب روانہ ہوتا ہے۔(1)

وہ نہیں جانتا کہ ہزاروں فرشتے ،ہمارے مولا کی رکاب مین ان کی مدد کر رہے ہیں۔

اب امام کو پتہ چلتا ہے کہ سفیانی جنگ کےلئے کوفہ کی جانب آ رہا ہے۔ (2)


1- الإمام الصادق(علیه السلام): «... جیش السفیانی وأصحابه والناس معه ، وذلک یوم الأربعاء...»: بحار الأنوار ج 5 ص 387.
2- أمیر المؤمنین(علیه السلام): «... فیخرج بخیله ورجاله وجیشه فی مئتی ألف وستّین ألفاً...»: معجم أحادیث الإمام المهدی(علیه السلام) ج 3 ص 94

ص:114

لشکر امام کوفہ سے باہر اپنی پوزیشن لے لیتا ہے۔اب دونوں لشکر آمنے سامنے ہیں۔امام لشکر سفیانی کے پاس جاتے ہیں ان کو سمجھاتے ہیں۔

سفیانی کے ساتھی امام سے کہتے ہیں: جس راستے سے آئے ہیں واپس چلے جائیں۔(1)

امام اپنی بات ان سے جاری رکھتے ہیں اور انہیں کہتے ہیں: کیا جانتے ہو کہ میں پیغمبر کا بیٹا ہوں۔

نہیں جانتا کیا ہوتا ہےسفیانی ابھی جنگ سے گریز کرتا ہے ، شاید اس لیے کہ ابھی پوری طرح جنگ کے لیے تیار نہیں ہے یا حملہ کرنے کی پوری تیاری نہیں ہے کیونکہ اسں نے امام کی باتوں کو سنا ہے اور احتمال ہے کہ امام کی باتوں کا اثر اس پر ہوا ہے۔

سفیانی چاہتا ہے کہ کچھ دنوں کے لیے جنگ کو موخر کر دے تاکہ امام کی باتوں کا اثر زائل ہو جائے وہ عقب نشینی کا حکم دیتا ہے اور صورتحال پر امن ہو جاتی ہے۔


1- الإمام الصادق(علیه السلام): «... جیش السفیانی وأصحابه والناس معه ، وذلک یوم الأربعاء ، فیدعوهم ویناشدهم حقّه ، ویخبرهم أنّه مظلوم مقهور ، ویقول: من حاجنی فی الله فأنا أولی الناس بالله...»: نفس المصدر ج 5 ص 387.

ص:115

روز جمعہ کا سورج طلوع کرتا ہے امام کو اطلاع ملتی ہے کہ سفیانی نے امام کے ایک صحابی کو شہید کردیا ہے۔

گویا سفیانی کوفہ پر حملہ کا ارادہ رکھتا ہے۔(1)

امام دفاع کے لیے تیار ہو جاتے ہیں سخت جنگ کا آغاز ہو جاتا ہے۔

سفیانی جنگ کا آغاز کرتا ہے اور امام کے کچھ ساتھی شہید ہو جاتے ہیں خوش نصیب ہیں وہ جو اپنی آرزو کو پہنچے۔ اب خدا کا وعدہ پورا ہوتا ہے سفیانی میدان کے درمیان کھڑا ہے اور اپنے سپاہیوں کی کثرت سے خوش ہے۔

اچانک وہ دیکھتا ہے کہ ایک ایک کر کے اس کے سپاہی گرتے ہیں۔ سفیانی نہیں جانتا کہ فرشتے امام کی مدد کے لیے آ گئے ہیں۔ سفیانی ہرگز گمان نہیں کرتا تھا کہ اس کے سپاہی اس طرح گرنا شروع ہو جائیں گے۔

سفیانی جب ان حالات کو دیکھتا ہے تو سمجھ جاتا ہے کہ مقابلہ کرنے کا کوئی فائدہ نہیں وہ چند ساتھیوں کے ساتھ ملکر راہ فرار اختیار کرتا ہے۔(2)

کیا آپ نے ”صیاح“ کا نام سنا ہے؟


1- الإمام الصادق(علیه السلام): «... فیقولون: ارجع من حیث شئت لا حاجه لنا فیک...»: معجم أحادیث الإمام المهدی(علیه السلام) ج 3 ص 306.
2- الإمام الصادق(علیه السلام): «فإذا کان یوم الجمعه یعاود ، فیجیء سهم فیصیب رجلاً من المسلمین فیقتله ، فیقال: إنّ فلاناً قد قُتل...»: بحار الأنوار ج 5 ص 387.

ص:116

وہ امام کے لشکر کا ایک سپاہی ہے وہ چند سپاہیوں کے ساتھ مل کر سفیانی کا پیچھا کرتا ہے اور بالاخر اس کو گرفتار کر لیتا ہے۔

مغربین کی نماز کا وقت ہو جاتا ہے نماز کے بعد سفیانی کو امام کی خدمت میں پیش کیا جاتا ہے۔

سفیانی امام کو مخاطب کر کے کہتا ہے: مجھے مہلت دیں۔

امام اپنے اصحاب کی طرف دیکھتے ہیں اور فرماتے ہیں: آپ کی رائے اس کے بارے میں کیا ہے؟ میں نے عہد کیا ہے کہ ہر کام کرنے میں آپ کی رائے کو بھی شامل کروں۔

اصحاب امام مشورہ کرتے ہیں اور بالآخر فیصلہ کرتے ہیں کہ سفیانی کو سزا دی جائے اس نے بہت سے شیعہ لوگوں کو بے رحمانہ انداز میں قتل کیا ہے۔پیمان شکنی بھی کی ہے۔

اس طرح سفیانی کو اس کے کیے کی سزا مل جاتی ہے اور دنیا ہمیشہ ہمیشہ کے لیے اس کے شر سے محفوظ ہو جاتی ہے۔(1)


1- أمیر المؤمنین(علیه السلام): «فتکون وقعه یهلک الله فیها جیش السفیانی ویمضی هارباً»: معجم أحادیث الإمام المهدی(علیه السلام) ج 2 ص 96.

ص:117

ص:118

فلسطین کی طرف روانگی

سفیانی کی ہلاکت اور اس کے لشکر کی تباہی کے بعد امام فیصلہ کرتے ہیں کہ اپنے لشکر کو پوری دنیا میں بھیجیں۔

تین سو تیرہ افراد میں سےہر ایک کو ضروری احکامات کے بعد پوری دنیا کے مختلف حصوں میں روانہ کیا جاتا ہے۔

امام فرماتے ہیں کہ جہاں بھی جائیں اور ان کے لیے کوئی نیا مسئلہ در پیش ہو کہ جس کا حل انہیں معلوم نہ ہو تو اپنی ہتھیلی پر نگاہ کریں؛ اس طرح انہیں اس کا جواب مل جائے گا۔(1)

اب خدا حافظی کا وقت ہے!

یہ تین سو تیرہ با وفا اصحاب امام سے جدا ہوتے ہیں۔

یہاں پر امام ہر ایک کو اپنے پاس بلاتے ہیں اپنے ہاتھ کو ان کے سینہ پر پھیرتے ہیں۔(2)

کیا اس کام کی علت (وجہ) جانتے ہیں؟


1- أمیر المؤمنین(علیه السلام): «فیأخذه رجل من الموالی اسمه صبّاح ، فیأتی به إلی المهدی(علیه السلام)وهویصلّی العشاء الآخره ، فیخفّف صلاته... فیقول: شأنکم وإیّاه ، اصنعوا به ما شئتم...»: معجم أحادیث المهدی ج 3 ص 96.
2- الإمام الصادق(علیه السلام): «... فإذا ورد علیک أمر لا تفهمه وتعرف القضاء ، فانظر إلی کفّک واعمل بما فیها...»: الغیبه للنعمانی ص 334، بحار الأنوار ج 52 ص 365.

ص:119

یہ تین سو تیرہ افراد پوری دنیا میں امام کے نمائندے ہیں اور ان میں تمام خوبیوں کا پایا جانا ضروری ہے۔ امام کے ان کے سینہ پر ہاتھ پھیرنے سے ان کی ذمہ داری کو بہتر انداز میں انجام دینے کی صلاحیت میں اضافہ ہو جاتا ہے۔

تمام اصحاب اپنے گروہوں کے ساتھ دنیا کے مختلف حصوں کی جانب روانہ ہو جاتے ہیں تاکہ جلد از جلد پوری دنیا پر مھدوی حکومت تشکیل پا سکے۔(1)

امام کے اصحاب کے پاس عجیب و غریب قدرت ہے حتیٰ کہ پانی کے اوپر بھی چل سکتے ہیں اسی لیے دریاﺅں کو عبور کرنے کے لیے انہیں کسی کشتی کی ضرورت نہیں۔(2)

امام کسی کو فلسطین نہیں بھیجتے۔تو آپ تعجب کرتے ہیں اور وجہ پوچھتے ہیں۔

دیکھو امام خود فلسطین جا رہے ہیں ،کیونکہ وہاں یہ اہم واقعات رونما ہوں گے پس امام کا وہاں ہونا ضروری ہے۔


1- الإمام الباقر(علیه السلام): «فیبعث الثلاثمئه والبضعه عشر رجلاً إلی الآفاق کلّها ، فیمسح بین أکتافهموعلی صدورهم»: بحار الأنوار ج 52 ص 345، تفسیر العیّاشی ج 2 ص 60.
2- الإمام الباقر(علیه السلام): «کأنّی بالقائم یفرّق الجنود فی البلاد...»: الإرشاد ج 2 ص 379، روضه الواعظین ص 264.

ص:120

اس بنا پر امام چند اصحاب کے ساتھ بیت المقدس قدس کی طرف روانہ ہوتے ہیں کچھ دونوں کے بعد امام بیت المقدس پہنچ جاتے ہیں۔

اور چند روز اس شہر میں قیام کرتے ہیں یہاں تک کہ روز جمعہ آ جاتا ہے۔

اور آپ نہیں جانتے کہ وہ روز جمعہ کتنا اہم اور تاریخ ساز دن ہے ! اس دن کچھ عیسائی اس شہر میں جمع ہوں گے اور ایک اہم واقعہ رونما ہو گا۔

جمعہ کا دن آ جاتا ہے کتنا عظیم اجتماع ہے تمام منتظر ہیں۔

اِدھر دیکھو! سر کو اٹھاﺅ اور آسمان کی طرف دیکھو۔

کیا اس سفید بادل کو دیکھ رہے ہیں؟ وہ جوان کون ہیں جو اس پر سوار ہے۔

کیا ان دو فرشتوں کو دیکھتے ہو جو ان کے ساتھ کھڑے ہیں؟ (1)

وہ بادل زمین کی طرف آ رہا ہے بیت المقدس میں ایک شوروغل برپا ہے!

شاید وہ جوان،حضرت عیسی ہیں !

جی ہاں ! آپ کا گمان صحیح ہے ،وہ حضرت عیسی ہی ہیں ۔


1- الإمام الصادق(علیه السلام): «فإذا بلغوا الخلیج کتبوا علی أقدامهم شیئاً ومشوا علی الماء»: الغیبه للنعمانی ص 334، بحار الأنوار ج 52 ص 365.

ص:121

وہ سفید بادل قدس کے پاس رکتا ہے اور حضرت عیسی اس سے اترتے ہیں ۔

عیسائی خوشی سے پھولے نہیں سماتے اور ان کی طرف بڑھتے ہیں اور کہتے ہیں ہم آپ کے یارو مددگار ہیں۔

آپ کیا سمجھتے ہیں کہ حضرت عیسیٰ علیہ السلام انہیں کیا جواب دیں گے؟

حضرت عیسی فرماتے ہیں : " تم میرے مددگار نہیں ہو " (1)

تمام عیسائی تعجب کرتے ہیں، حضرت عیسیٰ علیہ السلام ان کی طرف توجہ کیے بغیر آگے بڑھتے ہیں۔

وہ کہاں جا رہے ہیں؟ اِدھر دیکھو!

امام زمانہ مسجد الاقصیٰ کے محراب میں کھڑے ہیں ان کے تمام اصحاب ان کے پیچھے صف میں کھڑے ہیں اور وقت نماز کا انتظار کر رہے ہیں۔

حضرت عیسیٰ علیہ السلام محراب کی جانب پڑھتے ہیں امام کے ساتھ مصافحہ کرتے ہیںامام زمانہ علیه السلام حضرت عیسیٰ علیہ السلام کو مخاطب کر کے کہتے ہیں:


1- «تحمله غمامه ، واضع یده علی منکب ملکین»: کتاب الفتن للمروزی ص 347، تاریخ مدینه دمشق ج 1 ص 229.

ص:122

اے عیسیٰ علیہ السلام آپ آگے کھڑے ہوں اور ہمارے امام جماعت بنیں۔(1)

حضرت عیسیٰ علیہ السلام کہتے ہیں: میں زمین پہ آپ کا وزیر بننے آیا ہوں نہ کہ امام میں آپ کے پیچھے نماز پڑھوں گا۔(2)

نماز برپا ہوتی ہے ،تمام عیسائی تعجب سے دیکھتے ہیں ۔حضرت عیسیٰ علیہ السلام مسلمانوں کے ساتھ نماز میں کھڑے نماز پڑھ رہے ہیں۔

یہاں پر بہت سے عیسائی مسلمان ہو جاتے ہیں اور امام کے ساتھیوں کے ساتھ ملحق ہو جاتے ہیں۔

اے میرے ہمسفر! امام کا یہاں پر ایک اور بھی پروگرام ہے اور وہ صندوق مقدس کا معاملہ ہے۔

کیا جانتے ہیں کہ صندوق مقدس کیا ہے؟

یقینا آپ نے سنا ہے کہ جب حضرت موسیٰ علیہ السلام دنیا میں آئے ان کی ماں نے ان کو ایک صندوق میں رکھا اور دریا کے سپرد کر دیا۔


1- «ثمّ یأتیه النصاری فیقولون: نحن أصحابک، فیقول: کذبتم، بل أصحابی المهاجرون بقیّه أصحاب الملحمه ، فیأتی مجمع المسلمین»: کتاب الفتن للمروزی، ص 347.
2- «وینزل عیسی بن مریم(علیه السلام)... فیقول له أمیرهم: یا روح الله تقدّم، صلِّ»: مسند أحمد ج 4 ص 217، تفسیر ابن کثیر ج 1 ص 593، الدرّ المنثور ج 2 ص 243.

ص:123

وہ صندوق اس وقت امام کے پاس ہے اور اس وقت وہ اس صندوق کو اپنے ساتھ لائے ہیں شاید یہ صندوق یہودیوں کی ہدایت کا سبب بن جائے!

کیا جانتے ہیں کہ یہ صندوق یہودیوں کے نزدیک کتنا مقدس ہے؟

کیا جانتے ہیں کہ یہ صندوق یہودی کے مقدس ترین تبرکات میں سے ہے۔

حضرت موسیٰ علیہ السلام نے اپنی وفات سے قبل اصلی تو رات کو مٹی کی لوح پہ لکھا تھا اور اسے اس صندوق میں رکھا تھا اور اپنے جانشین ”یوشع“ کے حوالہ کیا تھا۔

جب تک یہ صندوق ان یہودیوں کے درمیان تھا وہ عزت والے تھے؛لیکن جب سے وہ صندوق ان کے ہاتھوں سے گیا ان کی عزت بھی ختم ہو گئی۔

جی ہاں! انہوں نے اس صندوق کی حرمت کا خیال نہ رکھا خدا نے اس صندوق کو ان سے لے لیا۔(1)


1- «فیقول: بل صلِّ أنت بأصحابک، فقد رضی الله عنک، فإنّما بُعثت وزیراً ولم أُبعث أمیراً»: کتاب الفتن للمروزی ص 347.

ص:124

اچھا ہے ایک اور سوال بیان کرتا ہوں: کیا جانتے ہیں کہ جب ایک پیغمبر بنی اسرائیل اس دنیا سے گئے تو کون ان کے جانشین ہوئے؟

جس کے پاس یہ صندوق ہوتا، وہ بعد والا نبی ہوتا اور یہودی اس کے سامنے تسلیم خم ہوتے۔(1)

اب امام کا ارادہ یہ ہے کہ اس صندوق کو یہودیوں کو دکھائیں۔

جب یہودی اس گمشدہ صندوق کو دیکھیں گے تو تعجب کریں گے ایک کثیر تعداد امام پر ایمان لے آئے گی کیونکہ ان کا یہ عقیدہ ہے کہ جس کے پاس یہ صندوق میں اس کے سامنے سر تسلیم خم کر لو۔(2)

ایک بہت تھوڑی تعداد حق کو قبول کرنے سے اجتناب کرے گی۔ امام ان کے ساتھ جنگ کریں گے اور انہیں شکست دیں گے۔

اب بیت القدس میں امام کا کام مکمل ہو جاتا ہے اور امام کوفہ کی طرف لوٹ جاتے ہیں۔


1- الإمام الباقر(علیه السلام): «هذا التابوت هو الذی أنزله الله علی أُمّ موسی فوضعته فیه فألقته فی البحرفلمّا حضرت موسی الوفاه وضع فیه الألواح...»: بحار الأنوار ج 87 ص 110، التبیان ج 2 ص 293، تفسیر مجمع البیان ج 2 ص143.
2- (وَقَالَ لَهُمْ نَبِیُّهُمْ إِنَّ ءَایَهَ مُلْکِهِ أَن یَأْتِیَکُمُ التَّابُوتُ فِیهِ سَکِینَهٌ مِّن رَّبِّکُمْ وَبَقِیَّهٌ مِّمَّا تَرَکَ ءَالُ مُوسَی وَءَالُ هَارُونَ...): (البقره: 248). عن الإمام الصادق(علیه السلام): «السلاح فینا بمنزله التابوت فی بنی إسرائیل ، یدور الملک حیث دارالسلاح ، کما کان یدور حیث دار التابوت»: بصائر الدرجات ص 197، الخصال ص 117.

ص:125

ص:126

ص:127

کوفہ کی طرف واپسی

خبریں ملتی ہیں کہ ایک کے بعد ایک ملک امام کے اصحاب کے ہاتھوں فتح ہو رہا ہے۔

اچھی بات یہ ہے کہ بہت سے ملک بغیر کسی مزاحمت کے امام کی حکومت کو تسلیم کر رہے ہیں اور حکومت عادلانہ مھدوی کا حصہ بنتے جا رہے ہیں۔ اصحاب امام نے صرف تیرہ شہروں اور گروہوں سے جنگ کی ہے۔(1)

جی ہاں پوری دنیا میں ایک حکومت تشکیل پا چکی ہے۔(2)

دنیا کے ہر کونے میں توحید پرستی کی آوازیں بلند ہو رہی ہیں اور پوری دنیا کے لوگوں کے دلوں میں اہل بیت کی محبت پیدا ہو رہی ہے۔(3)

دنیا کا صرف ایک ہی دین اسلام ہے اور یہ وہی وعدہ ہے کہ جو خدا نے اپنے نبی کے ساتھ کیا تھا۔(4)


1- «یظهر تابوب السکینه... فیوضع بین یدیه ببیت المقدس ، فإذا نظرت إلیه الیهود أسلمت إلاّ القلیل منهم...»: الملاحم والفتن للمروزی ص 223، الملاحم والفتن للسیّد ابن طاووس ص 150.
2- الإمام الصادق(علیه السلام): «ثلاث عشره مدینه وطائفه یحارب القائم أهلها ویحاربونه...»: الغیبه للنعمانی ص 309، بحار الأنوار ج 52 ص 363.
3- رسول الله(صلی الله علیه وآله وسلم): «... آخرهم القائم الذی یفتح الله تعالی ذکره علی یدیه مشارق الأرضومغاربها»: الأمالی للصدوق ص 173، کمال الدین ص 282.
4- الإمام الصادق(علیه السلام):«إذا قام القائم ، لا یبقی أرض إلاّ نودی فیها شهاده أن لا إله إلاّ الله ، وأنّ محمّداً رسول الله»: ینابیع المودّه ص 236. عن الإمام الباقر(علیه السلام): «إذا قام القائم ، عُرض الإیمان علی کلّ ناصب ، فإن دخل فیه بحقیقه...»: الکافی ج 8 ص 227، شرح الأخبار ج 3 ص 375.

ص:128

اسی دن جب امام نے مکہ میں ظہور کیا تھا سے لے کر آج تک عالمی حکومت کے قیام میں صرف آٹھ ماہ گزرے ہیں۔(1)

اب امام اپنے اسلحہ کو زمین پہ رکھتے ہیں کیونکہ ہر جگہ امن و امان قائم ہو گیا ہے۔

امام کوفہ میں سکونت اختیار آتے ہیں اور یہ شہر عالمی حکومت کا دارالحکومت بن جاتا ہے۔

مسجد کوفہ میں اب لوگوں کی گنجائش نہیں ہے اسی لیے امام شہر کوفہ میں چند دیگر مساجد بنانے کا اقدام کرتے ہیں۔(2)

امام مسجد سہلہ کو اپنے گھر کے طور پر انتخاب کرتے ہیں۔ یہ مسجد حضرت ادریس اور حضرت ابراہیم کا گھر بھی رہی تھی۔(3)

ٹھیک ہے کہ پوری دنیا امام کے اختیار میں ہے دنیا کی تمام دولت امام کے پاس ہے، لیکن ان کی زندگی بہت ہی سادہ ہے۔(4)


1- الإمام الباقر(علیه السلام): «فی قول الله: (لِیُظْهِرَهُ عَلَی الدِّینِ کُلِّهِ وَلَوْ کَرِهَ الْمُشْرِکُونَ)، یکون أن لا یبقی أحد إلاّ أقرّ بمحمّد(صلی الله علیه وآله وسلم)»: تفسیر العیّاشی ج 2 ص 87، بحار الأنوار ج 52 ص 346.
2- الإمام الباقر(علیه السلام): «یضع سیفه علی عاتقه ثمانیه أشهر»: کمال الدین ص 318، 329، الغارات ص 12، شرح الأخبار ص 288، الغیبه للنعمانی ص 168، 320، الملاحم والفتن ص 139، 140، بحار الأنوارص 368.
3- أمیر المؤمنین(علیه السلام): «لأنّ مسجد الکوفه لیضیق علیهم... تُبنی له أربع مساجد، مسجد الکوفه أصغرها ، وهذا ومسجدان فی طرفی الکوفه...»: تهذیب الأحکام ج 3 ص 254،بحار الأنوار ج 52 ص 374.
4- الإمام الصادق(علیه السلام): «کأنّی أری نزول القائم فی مسجد السهله بأهله وعیاله... کان فیه منزل إدریس وکان منزل إبراهیم»: فضل الکوفه ومساجدها ص 43، المزار لابن المشهدی ص 134، بحار الأنوار ج 52 ص 317.

ص:129

جی ہاں! امام اپنے دادا حضرت علی علیہ السلام کی سنت پہ عمل کرتے ہیں کہ جو اپنی حکومت کے دوران سادہ ترین لباس اور غذا استعمال کرتے تھے۔

امام جہاں بھی جاتے ہیں سایہ ان کے سر پر رہتا ہے یہ بادل ایک خوبصورت آواز دیتا ہے: یہ مھدی ہیں۔(1)

جتنا بھی وقت گزرتا ہے امام کی جوانی میں کوئی تبدیلی رونما نہیں ہوتی اور آپ ہرگز بوڑھے نہیں ہوتے۔(2)


1- الإمام الصادق(علیه السلام): «... فوالله ما لباسه إلاّ الغلیظ ، ولا طعامه إلاّ الجشب...»: الغیبه للنعمانی ص 239، الغیبه للطوسی ص 46، بحار الأنوار ج 52 ص 354.
2- الإمام الصادق(علیه السلام): «علی رأسه غمامه تظلّه من الشمس ، تدور معه حیثما دار ، تنادی بصوت فصیح: هذا المهدیّ(علیه السلام)»: الأمالی للطوسی 292، بشاره المصطفی(صلی الله علیه وآله وسلم) ص 284.

ص:130

ص:131

زمین پر جنت

اب چاہتا ہوں کہ بتائوں ظہور کے زمانہ کے وقت زندگی کیسی ہو گی، کیا سننا پسند کریں گے؟

آپ کو زمانہ ظہور کی تمام خوبیاں اس طرح نظر آئیں گی:

اس زمانہ میں تمام خوبیاں اکٹھی ہوں گی۔(1)

تمام اہل آسمان اور زمین خوشی و انسباط میں ہوں گے؛ کیونکہ عدل کی حکومت قائم ہے۔(2)

ظلم و ستم کا نام و نشان نہ ہوگا۔

لوگوں میں فقر و غربت کا خاتمہ ہو چکا ہے صدقہ دینے کو فقیر نہ ملےگا۔ (3)

تمام لوگ دنیا کی بجائے عبادت کے عاشق ہیں اور اپنے کمال کو خدا کی بندگی میں تلاش کرتے ہیں اور ہرگز گناہ نہیں کرتے۔(4)

فرشتے انسانوں پہ سلام کرتے ہیں ان کے ساتھ معاشرت کرتے ہیں۔


1- الإمام الرضا(علیه السلام): «علامته أن یکون شیخ السنّ شابّ المنظر... وإنّ من علامته أن لا یهرم بمرور الأیّام واللیالی علیه حتّی یأتی أجله»: کمال الدین ص 652، بحار الأنوار 52 ص 285.
2- الإمام الحسین(علیه السلام): «الخیر کلّه فی ذلک الزمان یقوم قائمنا»: الغیبه ص 213.
3- رسول الله(صلی الله علیه وآله وسلم): «... یفرح به أهل السماء والأرض ، والطیر فی الهواء ، والحیتان فی البحر»: الملاحم والفتن ص 281. عن رسول الله: «لا تذهب الدنیا حتّی یملک رجل من أهل بیتی... اسمه اسمی یملأ الأرض عدلاًوقسطاً...»: فتح الباری ج 13 ص 185، المعجم الصغیر ج 2 ص 148، صحیح ابن حبّان ج 15ص 238، المعجم الأوسط ج 4 ص 256، تفسیر الرازی ج 2 ص 28، الجرح والتعدیل ج 2 ص 494، تاریخ بغدادج 1 ص387، سیر أعلام النبلاء ج5 ص 116.
4- الإمام الصادق(علیه السلام): «لا یجد الرجل منکم یومئذ موضعاً لصدقته ولا لبرّه ; لشمول الغنی جمیع المؤمنین»: الإرشاد ج 2 ص 384، بحار الأنوار ج 2 ص 384. عن الإمام الصادق(علیه السلام): «یطلب الرجل منکم من یصله... فلا یجد أحداً یقبل منه»: الإرشاد ج 2 ص 381، بحار الأنوار ج 52 ص 337.

ص:132

جی ہاں! لوگوں کے دل پاک ہو گئے ہیں لوگ فرشتوں کو دیکھ سکتے ہیں۔ (1)

خدا لوگوں پہ رحمت کے دروازے کھول دیتا ہے تمام لوگوں کی عقل کامل ہو جاتی ہے۔(2)

علم ودانش عام ہوگئی ہے اور انسان کا علم اور ترقی دس گنا بڑھ گئی ہے ۔ (3)

خدا وند متعال نے لوگوں کی قوت بینائی اور سماعت میں اضافہ کردیا ہے یہاں تک کہ لوگ پوری دنیا سے بغیر کسی وسیلہ کہ امام کو دیکھ بھی سکتے ہیں اور بات بھی سن سکتے ہیں (4)

جو لوگ امام کی خدمت میں حاضر ہونا چاہتے ہیں فرشتے انہیں کوفہ لے جاتے ہیں پھر واپس اپنے وطن پہنچا دیتے ہںں۔(5)

مومن اس قدر مقام پا لیتے ہیں کہ امام ہر ایک کو ایک لاکھ فرشتوں میں اپنا نمائندہ قرار دیتا ہے۔(6)

پوری دنیا میں کوئی بیمار نظر نہیں آتا سب لوگ صحت و سلامتی کی زندگی بسر کرتے ہیں۔(7)


1- الإمام الصادق(علیه السلام): «... یحسن حال عامّه الناس... لا یُعصی الله فی أرضه...»: بحار الأنوار ج 52 ص 128.
2- الإمام الرضا(علیه السلام): «إذا قام القائم ، یأمر الله الملائکه بالسلام علی المؤمنین والجلوس معهم فی مجالسهم...»: دلائل الإمامه ص 455.
3- الإمام الباقر(علیه السلام): «إذا قام قائمنا وضع الله یده علی رؤوس العباد ، فجمع بها عقولهم...»: الکافی ج 1 ص 25، کمال الدین ص 674، الخرائج والجرائح ج 1 ص 24.
4- الإمام الصادق(علیه السلام): «العلم سبعه وعشرون حرفاً ، فجمیع ما جاءت به الرسل حرفان ، فلم یعرف الناس حتّی الیوم غیر حرفین ، فإذا قام القائم أخرج الخمسه والعشرین حرفاً فبثّها فی الناس...»: مختصر بصائر الدرجات ص 117، بحار الأنوار ج 52 ص 336.
5- الإمام الصادق(علیه السلام): «إنّ قائمنا إذا قام ، مدّ الله عزّ وجلّ لشیعتنا فی أسماعهم وأبصارهم ، حتّی لا یکون بینهم وبین القائم برید ، یکلّمهم فیسمعون...»: الکافی ج 8 ص 241، بحار الأنوار ج 52 ص 336.
6- الإمام الرضا(علیه السلام): «فإذا أراد واحد حاجه أرسل القائم من بعض الملائکه أن یحمله...»: دلائل الإمامه ص 455.
7- الإمام الرضا(علیه السلام): «ومنهم من یصیّره القائم قاضیاً بین مئه ألف من الملائکه...»: دلائل الإمامه ص 455.

ص:133

پوری دنیا میں کہیں بھی اختلاف نظر نہیں آتا اور ہرقوم قبیلہ کے لوگ آرام و سکون کی زندگی بسر کرتے ہیں۔(1)

کوئی کسی کے ساتھ دشمنی و حسادت نہیں کرتا ہر ایک صمیم قلب سے دوسرے کو پسند کرتا ہیں۔(2)

اس زمانے میں دوستیاں سچی ہیں امام کے حکم پر دوست کو دوست سے وراثت ملتی ہے۔(3)

پوری دنیا میں امن قائم ہو گیا ہے اس طرح کہ وحشی درندے بھی انسانوں کو نقصان نہیں پہنچاتے حتیٰ کہ بھیڑیا بھی بھیڑ پہ حملہ نہیں کرتا۔(4)

خدا کی رحمت میں اضافہ ہر طرف ہریالی ہی ہریالی ہوتی ہے۔ (5)

یہ وہی خوبصورت ظہور ہے کہ تمام انبیاءالٰہی جس کے منتظر تھے وہ ظہور کہ جو تمام انسانوں کے دلوں کی آواز تھا۔(6)


1- رسول الله(صلی الله علیه وآله وسلم): «... ولا یمرض ، ویقول الرجل لغنمه ولدوابه: اذهبوا وارعوا...»: الملاحم والفتن ص 203، کتاب الفتن للمروزی ص 354.
2- الإمام الصادق(علیه السلام): «لیرفع عن الملل والأدیان الاختلاف ، ویکون الدین کلّه واحداً...»: مختصر بصائر الدرجات ص 180، بحار الأنوار ج 53 ص 4.
3- رسول الله(صلی الله علیه وآله وسلم): «... ولا تشاحّ ولا تحاسد ولا تباغض...»: الجامع الصغیر ج 2 ص 135، کنز العمّال ج 14 ص 333.
4- الإمام الصادق(علیه السلام):«فلو قد قام قائمنا أهل البیت ، ورث الأخ الذی آخی بینهما...»: کتاب من لا یحضره الفقیه ج 4 ص 352، مستدرک الوسائل ج 17 ص 186.
5- رسول الله(علیه السلام): «الحیّات والعقارب ظاهره ، لا تؤذی أحد ولا یؤذیها أحد ، والسبع علی أبواب الدور یستطعم ، لا یؤذی أحد...»: الملاحم والفتن ص 203، کتاب الفتن للمروزی ص 354. عن رسول الله(علیه السلام): «... وحتّی یمرّ الرجل علی الأسد فلا یضرّه...»: الجامع الصغیر ج 2 ص 135، کنز العمّال ج 14 ص 333
6- رسول الله(صلی الله علیه وآله وسلم): «فلا تمنع السماء شیئاً من قطرها ، ولا الأرض شیئاً من نباتها»: الجامع الصغیر ج 2 ص 402، مجمع الزوائد ج 7 ص 314، الکامل ج 3 ص 99، تذکره الحفّاظ ج 3 ص 838، تاریخ ابن خلدون ج 1 ص 808. عن رسول الله(صلی الله علیه وآله وسلم): «یؤذَن للسماء فی القطر ، ویؤذَن للأرض فی النبات ، حتّی لو بذرت حبک فی الصفا لنبت...»: الجامع الصغیر ج 2 ص 135، فوائد العراقیین ص 44 عن أمیر المؤمنین(علیه السلام): «... لأنزلت السماء قطرها ، ولأخرجت الأرض نباتها»: تحف العقول ص 115، الخصال ص 624، بحار الأنوار ج 52 ص 316،

ص:134

ص:135

ص:136

آخری بات

اے جان جہاں، اے چھپے ہوئے خزانے تم پر سلام ہو۔

اب پتہ چلا ہے کہ آپ کا ظہور کتنا خوبصورت ہے ہم بے صبری سے آپ کا انتظار کر رہے ہیں کہ آپ تشریف لائیں ہم پہ نوازش فرمائیں اور ہماری پیاس کو سیراب کریں۔

کے بارے میں مرکز

بسم الله الرحمن الرحیم والحمد الله رب العالمین
کوثر وجود زهرائے مرضیه سلام الله علیہا کی بارگاہ میں پیش ہے
هَلْ یَسْتَوِی الَّذِینَ یَعْلَمُونَ وَالَّذِینَ لَا یَعْلَمُونَ
کیا علم والے اور جاہل برابر ہو سکتے ہیں؟ سوره زمر/ 9
تعارف:
تعارف:
کمپیوٹر ریسرچ انسٹی ٹیوٹ اصفہان، 2007 سے حضرت آیت الله حاج سید حسن فقیه امامی (قدس سره الشریف)، کے زیر نگرانی ، یونیورسٹی اور حوزۂ علمیہ کے علماء اور ماہرین و مفکرین کی مخلصانہ اور روزانہ کی انتھک کوششوں کے ساتھ مذہبی، ثقافتی اور علمی شعبوں میں اپنی سرگرمیاں شروع کی ہے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
منشور:
کمپیوٹر ریسرچ انسٹی ٹیوٹ اصفہان نے اسلامی علوم کے میدان میں محققین ومفکرین کو کتابوں تک تیز رفتار طریقہ سے پہچانے کا بیڑا اٹھایا ہے،اور یہ دیکھتے ہوئے کہ اس میدان میں کام کرنے والے سرگرم ادارے اور مراکزبکھرے ہوئے اور جدا جدا ہیں جن تک رسائی بھی ناممکن لگتی ہے اس لئے صرف اور صرف علمی فائدہ کو مدّنظر رکھتے ہوئے اور ہر طرح کے ذاتی تعصب ،سماجی نقطۂ اختلاف ،قومی اور قبائلی اختلاف کو پَرے جھٹکتے ہوئےایک پروجیکٹ کا ڈھانچہ اس بنیاد پرقائم کیا کہ : »شیعہ مراکز اور ادارے کی تخلیق کردہ اور شائع کردہ تمام کتابوں اور انکےکاموں کو نظم وضبط اور ترتیب وتنظیم دیتے ہوئے انہیں یکجا کردیں « تاکہ اس کوشش کے ذریعہ ماہرین اور محققین کے پاس کتابوں اور تحقیقی مقالات کا انبار ہواور انکی جیب میں دنیا جہاں کا کتابخانہ موجود ہو تاکہ وہ ہردم اس سے فائدہ اٹھا سکیں، تعلیم یافتہ نسل اور تمام طبقات کے لئے مفید مواد مختلف زبانوں اور مختلف فارمیٹس میں تیار کرنا اور اسے سائبر اسپیس میں مفت منتشر کرنا اور دلچسپی رکھنے والوں تک پیغام اہلبیت علیہم السلام پہنچانا ہمارا مقصد ہے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہمارے مقاصد:
اسلامی ثقافت اور معارف ناب ثقلین کا فروغ اور ترویج و توسیع (کتاب الله و اهل البیت علیهم السلام)
لوگوں ،اور خاص طور پر نوجوانوں کی عام حوصلہ افزائی تاکہ وہ مذہبی مسائل زیادہ قریب سے سمجھ سکیں
موبائل، ٹیبلٹ اور کمپیوٹرز میں بیکار اور بے ہودےمواد کے بجائے مفید مواد کو بڑھانا۔۔۔
مدرسے اور یونیورسٹی کےمحققین و مفکرین کے لئے خدمات فراہم کرنا
لوگوں میں مطالعے کی عمومی ثقافت کو عام کرنا
اپنی اشاعتوں کو ڈیجیٹل بنانے کے لئے پبلشروں اور مصنفین کو ترغیب دلانا ۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پالیسی:
قانونی لائسنس اور اجازت کے مطابق کام کرنا
ہم فکر اور ہم سو مراکز کے ساتھ تعلقات و مواصلات
متوازی اور تکراری کام سے بچنا
صرف علمی مواد فراہم کرنا
اشاعت کے ذرائع کا ذکر
ظاہر ہےکہ تمام کتابوں میں مندرج چیزوں کی ذمہ داری مصنف پر ہے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
انسٹی ٹیوٹ کی دیگر سرگرمیاں:
کتابیں، کتابچے اور دیگر ایڈیشن کی اشاعت
کتاب پڑھنے کے مقابلوں کا انعقاد
مجازی نمائشوں کانعقاد: تھری ڈی، مذہبی جگہوں میں پنورما، سیاحت اور ...
اینیمیشن کی تخلیق ،کمپیوٹر کھیل وغیرہ۔۔۔
اس اڈریس کے ساتھ ویب سائٹ شروع کرنا: www.ghaemiyeh.com
ڈرامائی پروڈکشن، لیکچرز اور ...
مذہبی، اخلاقی اور نظریاتی و عقائدی سوالات کے جواب دینے کے نظام کی شروعات اور حمایت
اکاؤنٹنگ سسٹم، میڈیا بنانے والا، موبائل میکر، بلوتوت خودکار اور دستی نظام، ویب کیوسک، ایس ایم ایس اور ...کی نظام سازی
عوام کے لئے مجازی تعلیمی نصاب اور ٹریننگ کورسز (مجازی)
ٹیچر ٹریننگ کورسز(مجازی)
1. کمپیوٹرز ،ٹیبلٹ اور موبائل کے لئے گلوبل فارمیٹس میں مختلف قسم کے ریسرچ سافٹ ویئر کی تولید و تخلیق : JAVA
2. ANDROID
3. EPUB
4. CHM
5. PDF
6. HTML
7. CHM
8. GHB
1. چار عدد مارکٹ کتاب قائمیہ کے نام سے ،ورژن: ANDROID
2. IOS
3. WINDOWS PHONE
4. WINDOWS

تین زبانوں فارسی، عربی اور انگریزی میں انسٹی ٹیوٹ کی ویب سائٹ پر مفت میں دستیاب ہے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اختتامی کلمات:
ہم ہر اس ادارے ، مرکز، مراجع معظم تقلید کے دفاتر، تنظیموں ، ناشرین، مصنفین اور تمام معزز بزرگوں اور دوستوں جنہوں نے ہمیں اس مقصد تک پہنچنے میں ہماری مدد کی یا اپنے ڈیٹا کو ہمارے اختیار میں قرار دیا شکر گذار ہیں۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مرکزی دفتر کا پتہ:
اصفہان –خیابان عبدالرزاق - بازارچه حاج محمد جعفر آباده ای - کوچه شہید محمد حسن توکلی -پلاک 129- طبقه اول
ویب سائٹ: www.ghaemiyeh.com
ای میل: Info@ghbook.ir
مرکزی دفتر ٹیلی فون: 00983134490125
تہران ٹیلی فون: 88318722 021
تجارت اور فروخت: 00989132000109
صارفین کے معاملات: 00989132000109